News: Sensation!!! Dimenhydrinate Antazoline Side effects of xanax mylan Buy xanax without prescription in usa Keyword prescription qoclick tramadol without Generic xanax photo Oleandomycin Womans viagra Tramadol Primidone Iothalamate No perscription generic viagra Order phentermine cod Azatadine How long xanax stays in system Phentermine pillstore Flosequinan Cialis dysfunction erectile levivia viagra Purchase xanax online Lexapro and phentermine Xanax libido Cialis online Yohimbe and viagra Phentermine blue diet pills Monopril 37.5mg phentermine Viagra price comparison Lansoprazole Oxycontin xanax bars perclesept and lortab wha Adenosine Acetophenazine Maker of viagra About xanax Tramadol heath solutions network Liquid hydrocodone Aldara Luxury hotel rome xanax description No perscription xanax Phentermine usa pharmacy Buy phentermine online prescription Viagra recreational Cefixime Carbenicillin Trimethobenzamide Prescription free viagra Ionamin Cheap phentermine diet pills Importing cialis from canada to us Cialis info Glipizide Clomiphene Isotretinoin Viagra pill splitter Luvox Chlorothiazide Perindopril Canada cialis Procarbazine Phentermine 37.5 cash on delivery Non perscription generic viagra Hydrocodone cod only Viagra overdose Protonix Dexchlorpheniramine Paramethadione Alprazolam Tramadol cash on delivery Noroxin Buy xanax on line Medroxyprogesterone Cialis Buy Codeine Xanax and alcohol Macrodantin Alternative herbal review viagra Viagra story Daunorubicin Phentermine pictures Cialis vs viagra Order phentermine online without perscription Soma 350mg Addicted to xanax Blue diet phentermine pill Gatifloxacin Phentermine free shipping 90 supply Order viagra Cheap phentermine online Mexiletine Dimethindene Lasix Xanax versus klonopin for chronic anxiety Viagra lowest price Tramadol abuse Chlorthalidone Allopurinol Ambien Viagra 50mg Praziquantel Esmolol Enalapril Apcalis cialis Online pharmacy prescription viagra Discount phentermine to florida Accupril Opipramol Tranylcypromine Timolol Free viagra sample before buying Viagra pill cutter Terbinafine Phentermine addiction help Dibenzepin Phentermine free prescription Thioridazine Vinorelbine Nasonex Trileptal Cialis Pentaerythritol Lethal dosage of xanax Elocon Order viagra buying viagra uk Lisinopril Cheap phentermine with online consultation Get viagra Naratriptan Viagra discussion Tramadol narcotic Fioricet University rochester viagra pfizer Pindolol Estraderm Colesevelam Recreational viagra use Zyprexa Order cialis online Promazine Vicodin online pharmacy Diet in phentermine pill uk Phentermine uk suppliers Trifluoperazine Troglitazone Viagra dangers Ethchlorvynol Vicodin es Fenoldopam Xanax drug interactions Phentermine tablet Tobramycin Viagra info Xanax versus prozac Buy online tramadol Linezolid Liquid cialis Cialis pill Tramadol hcl acetaminotran Order soma online Prazosin Mucomyst Xanax without prescription Captopril Phentermine pill online discount Invia nasal viagra Free generic viagra Filing income tax tramadol Buy online viagra where Buy cheap phentermine cod Buy Lorazepam Demecarium Generic viagra overnight delivery Where to buy viagra Cialis vs viagra Linkdomain buy online viagra info domain buy onlin Ethisterone Phentermine 30mg Cialis ineffective Phentermine online ordering Allopurinol Phentermine very cheap Phentermine yellow Phentermine raleigh Delivered phentermine Cleocin Meridia sibutramine Buy vicodin without prescription Cod phentermine shipped Sophia viagra Viagra cream Imodium Cheapest viagra uk Comparison viagra cialis levitra Cialis generic canada Xanax in pregnancy Buy generic xanax India pharmacies ativan valium xanax On line doctor phentermine Discount phentermine Glucotrol Where to buy phentermine online Cheapest price phentermine online pharmacy Phentermine no perscription Information loss phentermine weight Drug screening phentermine Phentermine diet pill Beconase Mark martin uniform jacket team caliber viagra Spironolactone Acyclovir Meridia better than phentermine Xanax addiction treatment Quazepam Xanax online overnight Gabapentin Order hydrocodone online Does phentermine speed up metabolism Lowest drug price for phentermine Order viagra canada Phentermine 37.5mg tablet Phentermine online consultation Phenytoin Phentermine 37.5 diet pills Buy florida in phentermine Acetyldigitoxin Phentermine compare prices Best online deal for phentermine Imipenem Buy Didrex 2 mg xanax Phentermine cheap free shipping Generic vicodin Tramadol medicine Discount pharmacy phentermine Which is better cialis or levitra Purchase phentermine Cialis generic viagra Phentermine effects Acetylcholine Does phentermine work Fast delivery phentermine Cialis viagra levitra Xanax master card Fluconazole Taking phentermine Flunitrazepam Cevimeline Cialis dosages Dextromethorphan Order phentermine online uk L arginine natural viagra Estraderm Ambien cr Buy xanax no prescription Xanax withdrawl No phentermine prescription Compare prices tramadol Canadian viagra Temazepam Azathioprine Chenodiol Ganciclovir Cialis dose Phentermine uses Loss phentermine story success weight Viagra sales uk Generic prescription viagra without Amoxil Viagra sample pack Tramadol online discount cheap Anxiety disorder xanax Vicodin dosage Phentermine accepts cod Buy viagra prescription online Cialis drug Vicodin drug test Phentermine + sale Phentermine resident sale virginia Low cost phentermine health insurance lead Pravastatin Viagra knock offs Soma pill Generic viagra in canada Chloramphenicol Non perscription generic cialis Order xanax on line Methscopolamine Piroxicam Cheap viagra online prescription Phentermine priority mail Viagra tablet Order xanax online Soma Order vicodin online Oxtriphylline Mepindolol History of phentermine use Buy Norco Levivia viagra Terconazole Niacinamide Buy Tamiflu Phentermine alternative Get online viagra Omeprazole Phenyltoloxamine Buy xanax overnight Does viagra work for women Canada cheap viagra How much weight will you lose on phentermine Viagra alternative and woman Akane soma Buy lvivhostcom online viagra viagra Rimantadine Cialis overnight Buy Diazepam Phentermine line Phentermine on line without prescription Tramadol hcl Phentermine diet drug Felbamate Hydroxychloroquine Phentermine order easy Phentermine chemical enhancement Mixing viagra and cialis Paromomycin How to discontinue the use of phentermine Buy tramadol cheap Lopressor Isopropamide Accolate Phentermine sales Line pharmacy phentermine Phentermine overnight Haloperidol Hydrocodone bitartrate acetaminophen Phentermine 37.5 Biperiden Actos Cefixime Fluvoxamine Perscription cialis Cozaar Piperazine Carisoprodol Add link phentermine purchase Buy Ativan Cheapest phentermine free shipping Anileridine Information phentermine How long does xanax stay in system Xanax canada Cheap phentermine no shipping Order phentermine online and cod shipping Viagra useage Phentermine buy cheap Hydrocodone m367 Phentermine lowest price 37.5 online Adipex p phentermine vs Tramadol hydrochloride overdose Phentermine np with hoodia Tramadol 180 Ritodrine Amaryl Phentermine at cost with no prescription Lortab and xanax without a prescription Buying viagra online uk Carisoprodol Ephedrine Can woman take cialis Lisinopril drug interaction viagra Phenazopyridine Information on the drug xanax Levivia versus viagra Description of meridia Tramadol without perscription Acetohexamide Viagra 50 mg Cialis immunity Metolazone Trimethoprim Zidovudine Sertraline Crohns phentermine Valium and xanax Methicillin Hydrocodone pharmacy Cialis and levitra Cheapest viagra price Gabapentin Phentermine mexican pharmacies online Taking phentermine with antidepressants Order phentermine Colchicine Phentermine capsules In use viagra woman Xanax alcohol Drug vicodin Phentermine rankings Phentermine 15mg Didanosine Concomitant use of cialis and levitra Dovonex Blue 30 mg 90 free shipping phentermine pharmacy Xanax with same day delivery Soft tab viagra Glycopyrrolate Buy Bontril Xanax photos Phytonadione Congress viagra Clofazimine Buy Tramadol No fax payday loan buy tramadol Online viagra prescriptions Plicamycin Butalbital fioricet Per day buy phentermine Buy Hydrocodone Side effects of tramadol hydrochloride Fioricet description Pictures of mylan xanax Phentermine forums and chats Cialis tablet Ativan Kaopectate Phentermine vs adipex p Vincristine Losartan Tramadol Picture of generic xanax Buy cialis uk Canada cialis generic Aldactone Low dose of viagra What is phentermine Mycostatin Indocin Without prescription phentermine Buy Adderall Online pharmacy viagra Phentermine ship to florida Viagra anxiety Oseltamivir Erectile dysfunction viagra Generic sales viagra Cialis impotence drug eli lilly co Lose weight with phentermine and 5 htp Tramadol and online pharmacy Biaxin Afrin Free shipping cheap phentermine Albuterol Quinethazone Anxiety disorder xanax xr to wean off effexor xr Side effects of the drug tramadol Cheap quality viagra Phentermine prescriptions Niacin Buying viagra Thiotepa Etanercept Reliable same or next day phentermine purchase online Phentermine with free shipping Death cases from taking phentermine Bupropion Cheap viagra order online Cordarone Phentermine low prices Phentermine no prescription Buy in online uk viagra Feldene Lipitor Xanax fedex overnight Cefatrizine Cheap tramadol prescriptions online Naloxone Cialis side effects Thiabendazole Nortriptyline Viagra testimonials Buy viagra on line Flonase Tramadol hcl 50 mg tablet Tramadol active ingredient Cyclothiazide Cheapest online pharmacy phentermine Natural alternatives to viagra Buy phentermine epharmacist Midodrine Buy cialis online Viagra online ordering Vicodin overdose Cimetidine Taking xanax while pregnant Fosamax Phentermine success story Generic viagra lowest prices Arava Xanax withdrawals Tocainide Treat crohns disease with viagra Simvastatin Cilostazol Free overnight phentermine shipping Minipress Online pharmacy and phentermine Perscription phentermine Zetia Piperacillin Non prescription viagra Link buy online viagra info domain Viagra lowest prices Uk online pharmacy phentermine Order generic cialis Ceclor Discount phentermine online Cialis lowest price Viagra versus levivia Isotretinoin Atenolol viagra Detox hgh phentermine quit smoking xenical Generic name online qoclick tramadol Discount generic viagra Buy viagra online Buy no phentermine prescription Buspar xanax Viagra price list Buy Zyban Flavoxate Xanax during pregnancy Xanax prescriptions online Cialis experience On line prescription viagra Generic xanax Cheap xanax no prescription Phentermine online pay with mastercard Lowest viagra price Methylergonovine Lamisil Viagra prescriptions online Cialis sample Buy herbal viagra Low dose xanax prosexual Fioricet online Viagra sale online Generic price viagra Clemastine Us pharmacy phentermine How do i stop taking phentermine Is there a phentermine shortage Generic viagra pill Procainamide Purchase cialis online Phentermine message board Buy viagra Pfizer viagra Tylenol Dantrolene Buy consultation free hydrocodone online tramadol Pravastatin Oxcarbazepine Xanax manufacturer Soma bike Streptomycin Phentermine tablets Tinzaparin Cialis comparison levivia viagra Spectinomycin Buy online prescription viagra Riboflavin Prozac Phentermine pharmacies Neostigmine Diet medication online phentermine No prescripton phentermine Phentermine overnight delivery no prescription Free viagra without a perscription Cialis online sales Phentermine use Cycloserine Buy link onlinezwapto viagra Effects of xanax on pregnancy Information on phentermine Ativan xanax Argento soma Spiramycin Adipex diet discount phentermine pill Xanax online without prescription Xanax and valium Cheap perscription phentermine Cheap viagra uk Tetanus Phentermine interactions Vaccine Is it safe to take prozac and phentermine Pilocarpine Xanax for anxiety Generic viagra fast shipping Tramadol sale Macrobid Naprosyn Phentermine blogging Viagra on line Fosfomycin Cefpodoxime Cefotaxime Phentermine blue capules Tramadol hcl 50 mg Zithromax Xanax online without a prescription Buy cod online phentermine How long does xanax stay in your system Keflex Metrizoate Diprolene Fiorinal Low cost phentermine Phenylbutazone How does viagra work Compare viagra prices Buy phentermine on line Cialis levitra vs Acitretin Pyrimethamine Xanax half life Does phentermine help weight loss Buy phentermine fedex Mesalamine Simethicone Naproxen Mobic Extra cheap phentermine Buy Levitra Doxepin Botox Order phentermine phentermine online Buy tramadol without prescription Glyburide Viagra alternate Buy Viagra Aminophylline Viagra price Phentermine and ocular hypertension Fast phentermine Heparin Micronase Oxyphenonium Buy xanax online Cheep paris france phentermine Phentermine cash on delivery Online ordering viagra Phentermine shipped to florida No online prescription xanax Phentermine resin Phentermine free shipping Meridia Darvocet Xanax online pharmacy Grapefruit viagra Betamethasone Phentermine shipped to tn Methimazole Recreational viagra Purchase cialis Bentyl Viagra for woman Phentermine prozac Effects from side viagra Amerge Clomipramine Lorazepam Crestor Relafen Cialis generic viagra Locoid Alternative to viagra drug Iodamide Phenytoin Nicardipine Free generic viagra samples Phentermine mexico Phentermine tolerance Cialis new viagra Androgel Ciprofloxacin Saccharin Dilantin Hydralazine Humulin Online tramadol Xanax bars Viagra best buy Vicodin information Pravachol Dangers of phentermine heart Phentermine cod shipping Buy in phentermine uk Viagra strip poker flash games Viagra cialis generic Mechlorethamine Amrinone Acebutolol Cyclosporine Phentermine no prescription free shipping Tramadol hcl tab Cheap generic viagra Ecotrin Chlorcyclizine Permax Xanax Ketoprofen Canadian online pharmacy xanax Overdose xanax Meridia order Phentermine cheap Hydrocodone bitartrate Cloxacillin Pepcid Viagra cialis levivia comparison Cefaclor Phentermine without doctor's approval Adipex Teniposide Texas personal injury lawyers viagra Drug phentermine testing Order phentermine on line Cheapest phentermine online free shipping Side effects from prozac and xanax Xanax liver damage Ethosuximide Guanabenz Phentermine info Buy discount phentermine Noctec Medication drug mylan online search phentermine diet Nortriptyline Buy phentermine online cash on delivery Buy phentermine online without a prescription Phentermine 15 mgs Buy Phentermine Viagra experiences Foscarnet Cialis generic Levitra vs cialis Viagra information Discount soma Dobutamine Eon phentermine Order soma Cheap 37 5 phentermine Fioricet information Herbal viagra Levitra vs cialis vs viagra Herbal phentermine side effects How long does phentermine stay in your system Zyban Online pharmacies with doctor consultation for viagra Buying xanax online Guanadrel Labetalol Robaxin Ephedrine Macrobid Viagra drug interaction Pfizer viagra online Phentermine np Ethionamide Low natural resources for the drug phentermine Tramadol drug interaction Tramadol dogs Phentermine side effects Phentermine in stock ready to ship saturday delivery Xanax overnight delivery Book hydrocodone sport Adipex vs phentermine Hydrocortisone Long term phentermine use Yohimbine Lowest phentermine Generic cialis from india Xanax mexico Femara Phentermine studies Prazosin Alprazolam Phentermine online prescriptions Effexor Tramadol hc Phentermine 37.5 in round white tablets no imprint code Phentermine hcl side effects Diazepam Hydrocodone prescription online Arthrotec Niacin Quinapril Phentermine c.o.d. Tomorrow Finasteride Levallorphan Phentermine cod delivery Levivia vs cialis vs viagra Buspirone Glycerin Fluphenazine Xanax effect Viagra and blindness Xanax on line Is phentermine safe Drug laws ohio diet phentermine Phentermine effects on birth control Mirena Percocet Opium Buy generic viagra online Methotrimeprazine Cheapest cialis price Xanax withdraw& leukemia symptoms Cephalexin Lithium Xanax 2mg generic alprazolam 180 pills Xanax drug prescription Hexoprenaline Tramadol prescriptions Alavert Pargyline Carbidopa Order phentermine diet pill Levlen Herbal viagra alternative review Etoposide Epirubicin Buy Fioricet Suicide xanax Buy cheap domain onlinemiheyorg phentermine phentermine Adipex phentermine prescription Soma financial Herbal phentermine Acarbose Generic viagra overnight shipping Is viagra safe for women Cheap tramadol Phentermine snorting Echothiophate Propoxyphene Fenoterol Pantoprazole Thiopropazate Cialis experiences Dapsone Buy cialis Picture of soma Penicillin Price viagra viacreme Online pharmacy and phentermine overnight Mestranol Bromodiphenhydramine Famotidine Meridia versus phentermine Cetirizine Buy xanax without prescription Xanax cod Adderall Nystatin Generic viagra Tools needed for injecting xanax Buy ambien online Triamterene Imipramine Leflunomide What does phentermine look like Adipex loss phentermine weight Flexeril Phentermine $89 On line phentermine Bexarotene No prescription phentermine free shipping Ash of soma No perscription xanax cheap Lipids Metaraminol Xanax weight loss Delavirdine Phentermine ephedrine Cafergot Appetite suppressants and phentermine Altace Zuclopenthixol Buy viagra uk Viagra substitute Depakote Dipyridamole Pfizer xanax pills Mark martin viagra photo Heart phentermine Edrophonium Chlortetracycline Phentermine dosage Tripelennamine Uk viagra body building from sports supplement Calcitriol Meridia weight loss pill Glucotrol Concerta Best viagra prices online Viagra on line uk Online phentermine no prescription Lynestrenol Climara Buy cheap generic viagra Best price phentermine Adipex p phentermine Phentermine with no prior prescription Meloxicam Diet pill addiction phentermine Online viagra sales Viagra for woman study Phentermine side effects danger Cholecalciferol Meridia side effects Calcifediol Cheap phentermine perscription Phentermine Herbal phentermine review Mark martin viagra Somatostatin Phentermine generic Alesse Tramadol overdose Combivent Viagra cheap prescription Cialis overnight shipping Aldactone Online doctors perscriptions xanax steroids Xanax interaction with paxil Overnight tramadol Ambenonium 150 tramadol Buy Propecia Ciguatoxin Cyclandelate Molindone Aminoglutethimide Female viagra cream Amitriptyline Tramadol dog Tramadol withdrawal symptoms Phentermine no prescription required next day delivery Free try viagra Tramadol dosage for dogs Alternative to phentermine Cialis tablets Acetaminophen fioricet Taking viagra or levitra as a booster for cialis Buy Nexium From generic india viagra Dactinomycin Tramadol online

Interview of Mr. Shamsur Rahman Faruqi Courtesy Urdu Book Review

interview01

interview02

 

interview03

interview04

interview05

interview06

interview07

Shamsurrahman Faruqi— An Incident In Lahore ( Courtesy : An Annual of Urdu Studies)

178
SHAMSUR RAHMAN FARUQI
aN iNCIDENT IN lAHORE*

(TRANS L ATOR’ S NOTE : iT IS BOTH EXIGENT AND STIMULATING FOR ME AS A
DAUGHTER AND SCHOLAR TO FACE THE DUAL COMPLEXITIES OF WRITING ABOUT
MY FATHER AND TRANSLATING HIS WORK. tHOUGH IT IS DECIDEDLY CHALLENGING
FOR ME TO REMAIN OBJECTIVE, THE WORLD OF CONTEMPORARY URDU LITERATURE
AND ITS READERSHIP HAS MADE UP ITS MIND ABOUT sHAMSUR rAHMAN
FARUQI. tHEREFORE, i FEEL AT EASE SPEAKING POSITIVELY ABOUT HIS WORK.
PART OF MY OWN PROJECT IS TO BRING TO A WIDER AUDIENCE CONTEMPORARY
CRITICAL THOUGHT AND FICTION PUBLISHED IN URDU SINCE 1940.
sHAMSUR rAHMAN FARUQI (1936‒ ) ENTERED THE WORLD OF URDU LITERATURE
AS THE PROVERBIAL OUTSIDER AND EMERGED AS THE LEADER OF THE
MODERNIST TREND IN URDU, A THEORETICIAN WITH A UNIQUE VISION AND VAST
ERUDITION. iT IS A LESSER KNOWN FACT THAT HE STARTED HIS CAREER AS A SHORT
STORY WRITER AND PLANNED TO WRITE A NOVELóA DREAM THAT HE RECENTLY
FULFILLED WITH THE PUBLICATION OF THE HISTORICAL ROMANCE KAʾī ČāND Tẖē
sAR-E ĀSMāñ (KARACHI: sCHEHERZADE, 2006), A NOVEL OF EPIC PROPORTIONS
IN EVERY SENSE OF THE TERM.
aFTER COMPLETING HIS CRITICAL INVESTIGATIONS OF THE ENTIRE RANGE OF
URDU POETRY IN HIS FOUR-VOLUME STUDY OF THE SOUL STIRRING POETRY OF mīR
tAQī mīR (sHEʿR-E sHōR-aNGēZ), FARUQI PERHAPS FELT THAT HE STILL NEEDED
TO PUT DOWN IN WRITING MORE OF THE ENORMOUS KNOWLEDGE HE HAD FILED
AWAY OVER HIS THIRTY SOME YEARS OF CRITICAL THINKING, ALTHOUGH, THIS TIME,
IN A DIFFERENT MEDIUM. aS HE SAYS IN THE INTRODUCTION TO HIS FIRST
COLLECTION OF SHORT STORIES, sAVāR AUR dūSRē aFSāNē, HE HAD WRITTEN SO
MUCH ON GHāLIB BY WAY OF LITERARY CRITICISM THAT IF HE WAS TO WRITE
SOMETHING MORE ON GHāLIB IT HAD TO BE IN A QUITE DIFFERENT VEIN, AND
WHAT COULD BE MORE APPROPRIATE YET DIFFERENT THAN AN AFSāNA OR STORY
ABOUT GHāLIB AND HIS TIMES; HENCE, THE SHORT STORY ìGHāLIB aFSāNA.î HE
PUBLISHED IT UNDER THE ASSUMED NAME OF bēNī māDẖAV rUSVā IN THE
JOURNAL sHAB KHūN. tHE STORY CREATED A STIR AMONG URDU READERS
*ìlāHAUR Kā ēK ffāQIʿAî IS FROM sAVāR AUR dūSRē aFSāNē (KARACHI: ĀJ Kī
KITāBēñ, 2001), 333–51.
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 179
BECAUSE OF THE SWEEP OF ITS SCHOLARLY AND LINGUISTIC BRILLIANCE. tHERE
WAS SPECULATION ABOUT WHO COULD HAVE PENNED THIS REMARKABLE PIECE
OF FICTION. tHE ìGHāLIB aFSāNAî IS THE SECOND IN THE SERIES OF HIS REAPPEARANCE
AS A FICTION WRITER. tHE FIRST, ìlāHAUR Kā ēK ffāQIʿA,î WAS
PUBLISHED UNDER THE ASSUMED NAME ʿUMAR sHAIKH mIRZā. ìlāHAUR Kā
ēK ffāQIʿAî IS A STORY THAT IS SUSPENDED BETWEEN A NIGHTMARE AND AN
ACTUAL INCIDENT. iT IS NARRATED IN STREAM-OF-CONSCIOUSNESS STYLE, STRADDLING
THE LINE THAT BLURS THE DIFFERENCE BETWEEN AN AFSāNA (STORY) AND
ḥAQīQAT (TRUTH). iT IS A STORY EMBEDDED IN A NARRATIVE THAT CLAIMS TO BE
PART OF AN AUTOBIOGRAPHY THAT THE NARRATOR IS WRITING. iT IS ABOUT MEMORY,
DREAMS, REALITY AND AWARENESS.
oF THE STORIES IN sAVāR, i CHOSE TO TRANSLATE ìlāHAUR Kā ēK ffāQIʿAî
BECAUSE, FRANKLY SPEAKING, IT SEEMED THE ONE LESS CHALLENGING TO
TRANSLATE. i MIGHT ADD HERE THAT i HAVE CONSULTED MY FATHER ON THE
TRANSLATION AND HAVE BENEFITED FROM HIS SUGGESTIONS.)
iT HAPPENED IN 1937. iN THOSE DAYS i LIVED IN lAHORE.
oNE DAY IT OCCURRED TO ME THAT i SHOULD GO VISIT aLLAMA iQBAL. i USED
TO OWN A BEIGE-COLORED aMBASSADOR CAR. i DROVE IT TO aLLAMA sAHIBíS BUNGALOW.
i DIDNíT KNOW THE HOUSE NUMBER OR THE EXACT DIRECTIONS ON HOW TO
GET THERE, BUT i HAD A GOOD IDEA WHERE mClEOD rOAD WAS AND ALSO THAT HE
LIVED ON THAT STREET, SO i WAS ABLE TO FIND HIS HOUSE WITHOUT MUCH
DIFFICULTY.
tHE STREET SEEMED UNUSUALLY DUSTY. tHE FOOTPATH, OR LETíS SAY THE
BROAD STRIP OF LAND ON EITHER SIDE OF THE ROAD, WAS DRY AND COVERED IN
DUST. tHE GATE OF THE BUNGALOW WAS MADE OF WOOD AND VERY HIGH. iT WAS
PLATED WITH A GREY TIN, OR MAYBE IRON, SHEET WHICH MADE IT SEEM HEAVY
AND MYSTERIOUS. tHE GATE WAS OPEN AND i COULD CLEARLY SEE THE SHORT
DRIVEWAY CURVING TOWARDS THE MAIN HOUSE. tHE HOUSE WAS BIG AND GRAND
BUT OLD AND RUNDOWN. oNE COULD, EVEN FROM THE STREET, DISCERN THE SIGNS
OF PATCHY REPAIR AND THE SINGLE NEW ADDITION TO THE BUILDING. i RECALLED
iHSAN dANISHíS POEM ìʿaLLāMA iQBāL Kī KōÅẖīî (aLLAMA iQBALíS bUNGALOW)
THAT HAD BEEN PUBLISHED A COUPLE OF MONTHS BEFORE IN ONE OF THE
MAGAZINES, KHAIYāM OR ʿĀLAMGīR. tHE POEM EXPRESSED SADNESS AND
REGRET AT THE DILAPIDATED STATE OF THE BUNGALOW. tHE LAST COUPLET WAS:
iḥSāN, i HEAR THE HOUSE HAS NOW BEEN REPAIRED,
i WILL GO SOMETIME AND VISIT THERE, ONCE AGAIN.
i STOOD DEBATING WITH MYSELF WHETHER TO TAKE THE CAR INSIDE OR LEAVE IT
180 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
BY THE SIDEWALK. i THOUGHT THAT THERE MIGHT BE ANOTHER CAR PARKED IN THE
PORTICO AND IF i LEFT MINE IN THE DRIVEWAY IT MIGHT BLOCK SOMEONEíS PATH.
sO i LEFT MY CAR BY THE SIDE OF THE STREET AND GOT OUT. aT THAT POINT i NOTICED
THERE WERE TWO OR THREE STALLSóTHE KIND THAT CIGARETTE OR PAAN SHOPKEEPERS
HAVEóON THE SIDEWALK ACROSS THE STREET FROM ME. tHERE WAS A CROWD
OF YOUNG MEN AND LOAFERS GATHERED AROUND THEM AND THERE WERE SOME
FAIRLY YOUNG BOYS THERE TOO. i WAS DISPLEASED TO SEE THEM WASTING THEIR
TIME AT PAAN SHOPS INSTEAD OF STUDYING AT THE SCHOOL.
i WAS LOCKING UP MY CAR WHEN FIVE OR SIX YOUNG BOYS SUDDENLY RAN
ACROSS THE ROAD AND CAME TOWARDS ME. FROM THEIR DEMEANOR AND THE WAY
THEY WERE GESTURING, i PRESUMED THEY WERE ASKING FOR SOMETHING. i SAID TO
MYSELF THAT THIS WAS WORSE THAN WASTING TIME. tHESE KIDS SEEM TO BE
PROFESSIONAL BEGGARS. tHEY MUST BE UNDER THE CONTROL OF SOME ORGANIZED
CRIMINAL GROUP THAT MADE BEGGARS OF CHILDREN AND RUINED THEIR LIVES.
bEFORE i COULD PULL MY CAR KEYS OUT OF THE LOCK, FOUR OR FIVE OF THEM, ALONG
WITH A THIN, MEAN, EVIL-LOOKING MAN, HAD ARRIVED BY MY SIDE, THEIR HANDS
JUST INCHES AWAY FROM MY JACKET.
i WAS HORRIFIED TO REALIZE THAT THESE BOYS WERE NOT BEGGARS OR ILLITERATE
VAGRANTS FROM THE NEIGHBORHOOD. tHEY SEEMED TO BE PROFESSIONALS, THE
SORT THAT SELL THEIR BODIES. i SAID TO MYSELF, ìGOD HAVE MERCY, WHATíS GOING
ON HERE? aM i DREAMING?î iT WAS BROAD DAYLIGHT IN A DECENT NEIGHBORHOOD
OF A BUSY CITY, AND HERE WERE THESE CRIMINAL BOYS?
nOW IT DAWNED ON ME THAT THOSE HANDS WERE NOT ANGLING FOR MY COAT
POCKETS, THEY WANTED TO GRAB THE EDGE OF MY JACKET, THEY WANTED TO STRIKE
A DEAL WITH ME. tHESE TEN- OR TWELVE-YEAR OLDSí EYES HELD NO INNOCENCE.
rATHER, THEY HAD THE GLINT OF A STRANGE, EVIL LOOK. tHEIR FACES BORE A MATURITY
AND UNATTRACTIVE INSIPIDNESS THAT EVEN ADULTS SELDOM POSSESS.
dISGUSTED, i PUSHED THEM ASIDE AND MOVED AWAY QUICKLY, BUT THEY FOLLOWED
BEHIND. GOD FORBID! sUCH THINGS DONíT HAPPEN EVEN IN THE MOST
SENSATIONAL FICTION. ìiS THIS REALLY HAPPENING OR AM i GOING MAD?î i THOUGHT
TO MYSELF. tHEN i MADE A NOT QUITE GIGANTIC LEAP, GOT AWAY FROM THAT
CROWD AND WENT THROUGH THE GATE TOWARDS THE aLLAMAíS BUNGALOW.
tHANK GOD, THOSE ROGUES DIDNíT DARE TO COME INSIDE. tHE GATES WERE
OPEN, YET THOSE BOYS STOPPED BY THE POST AS THOUGH STRUCK BY AN ELECTRIC
CURRENT. i RAN TOWARDS THE PORTICO, FLICKING DIRT OFF MY CLOTHES AND HANDS IN
HATEFULNESS AND REVULSION.
i HONESTLY CANíT RECALL THE DETAILS OF MY MEETING WITH THE aLLAMA. aLL i
REMEMBER, AND VAGUELY AT THAT, IS THAT HE RECEIVED ME WITH GREAT KINDNESS.
fiHEN i RANG THE BELL, AN OLD MAN, WHOSE APPEARANCE SUGGESTED TO ME
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 181
THAT HE WAS SOMETHING BETWEEN A DISTANT RELATIVE AND A BUTLER, ANSWERED
THE DOOR AT ONCE. i GAVE HIM MY NAME AND HE WENT INSIDE AND RETURNED
WITHIN SECONDS TO CONVEY THE INFORMATION THAT aLLAMA sAHIB WAS RECEIVING
VISITORS IN THE DRAWING ROOM (CALLED, FOR SOME REASON, ìTHE ROUND ROOMî IN
URDU) AND ASKED ME TO STEP INSIDE. i HAVE NO RECOLLECTION OF WHAT WE
TALKED ABOUT. i WAS AN ENGINEER WITH THE RAILWAYS, WAS INTERESTED IN
POETRY (STILL AM), AND KNEW MANY POEMS OF THE aLLAMA BY HEART, BUT
BESIDES MY FASCINATION WITH POETRY, i POSSESSED NOTHING THAT WOULD MAKE
ME WORTHY OF HAVING A CONVERSATION WITH THE aLLAMA. i DO REMEMBER VERY
WELL THAT THE aLLAMA TOOK CARE NOT TO MAKE ME FEEL THAT OUR MEETING WAS A
WASTE OF HIS TIME. nOR DID HE BROACH A SUBJECT THAT WOULD MAKE ME AWARE
OF MY OWN IGNORANCE.
mY VISIT LASTED HALF AN HOUR. tHEN i MADE MY SALAAMS AND TOOK MY
LEAVE. aLLAMA sAHIB STEPPED OUT OF THE ROOM TO BID ME FAREWELL. iT DID
CROSS MY MIND TO REQUEST HIM TO DO SOMETHING ABOUT THE CROWD OF EVIL
URCHINS WHO HUNG OUT JUST ACROSS THE STREET FROM HIS BUNGALOW GATE, BUT i
COULDNíT SUMMON THE COURAGE TO SAY IT. HOW DID IT CONCERN HIM ANYWAY?
tHIS WAS A MATTER FOR THE POLICE TO TAKE CARE OF. PERHAPS THE aLLAMA WASNíT
EVEN AWARE OF THE KIND OF CROWD THAT HUNG AROUND THOSE STALLS ACROSS THE
STREET.
fiHEN i EMERGED FROM THE PORTICO, i NOTICED A GREY-COLORED, SOMEWHAT
WEATHER-BEATEN aUSTIN a40 PARKED IN THE DRIVEWAY. iT COULDNíT HAVE
BEEN THE aLLAMAíS BECAUSE i HAD HEARD HE OWNED A LARGE-SIZED FORD.
aNYWAY, IT MUST BE SOME VISITOR, i SAID TO MYSELF, SO IT WAS GOOD THAT i HAD
PARKED MY OWN CAR OUTSIDE.
i CAME OUT, EUPHORIC FROM THE MEETING WITH aLLAMA iQBAL. FOR A
MOMENT, i HAD FORGOTTEN THAT THERE WAS A POSSIBILITY OF ENCOUNTERING THOSE
URCHINS AGAIN, BUT UPON REACHING THE ROAD, i WAS STUNNED, COMPLETELY
TAKEN ABACK. a NUMBER OF THEM WERE STANDING BY MY CAR, THEY HAD EVEN
PUSHED THE CAR AROUND FOR IT WAS NOW FACING IN THE OPPOSITE DIRECTION. i
WAS STILL IN SOMETHING OF A SHOCK WHEN i SUMMONED THE COURAGE TO WALK
TOWARDS THE CAR WHILE THOSE WICKED BOYS WERE PRACTICALLY CLINGING TO ME.
tHEIR BODIES EMITTED A STRANGE ANIMAL-LIKE ODOR MINGLED WITH THE SMELL OF
RANCID OIL. i HADNíT YET MADE UP MY MIND HOW TO DEAL WITH THEM, WHEN A
TALL, THIN MAN DRESSED IN A LONG YELLOW SHIRT THAT WAS QUITE SOILED, AND A
MATCHING SHALWAR, LEAPT TOWARDS ME. bAREFACED INSOLENCE AND A LACK OF
MORALITY WAS WRIT LARGE ON HIS FACE, SO LARGE, IN FACT, THAT i INSTINCTIVELY
RECOILED AS THOUGH i HAD TOUCHED SOMETHING WET AND GOOEY. aT THAT TIME,
i WAS FACING THE ROAD AND HE WAS ON MY LEFT, FACING THE SIDEWALK.
fiHEN i TRIED TO TURN AROUND AND KICK HIM, HE ATTEMPTED TO TRIP ME BY
182 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
PUTTING OUT HIS LEG. bUT, GOD BE PRAISED, HIS LEG BECAME ENTANGLED WITH
MINE IN SUCH A WAY THAT HE LOST HIS BALANCE AND FELL WITH A SPLASH INTO THE
DEEP DRAIN BELOW THE SIDEWALK. GRABBING THIS OPPORTUNITY, i QUICKLY
OPENED THE CAR DOOR AND PRAYED IN MY HEART THAT THE CAR WOULD START
WITHOUT TROUBLE. mY PRAYERS WERE HEARD. aS SOON AS i TURNED THE IGNITION
KEY, THE ENGINE STARTED SMOOTHLY. i PUT THE CAR IN GEAR AND STEPPED HARD
ON THE ACCELERATOR.
tHE CAR MOVED FORWARD WITH A JOLT. mY INTENT WAS TO MOVE QUICKLY
FROM THE FIRST GEAR TO THE SECOND BECAUSE THE SECOND GEAR HAS BOTH PUSHING
AND ACCELERATING POWER. bUT WHEN i WENT INTO SECOND, i REALIZED THE
CAR WASNíT MOVING FORWARD MUCH. iT SEEMED AS IF SOME FORCE WAS HOLDING
IT BACK AND WAS IN FACT DRAGGING IT IN THE OPPOSITE DIRECTION. i LOOKED BACK
AND FOUND THAT A NUMBER OF THE URCHINS WERE HOLDING FAST TO THE BUMPER
AND THE TRUNK WITH ALL THEIR MIGHT, PREVENTING THE CAR FROM MOVING FORWARD.
sO HERE i WAS, FLOORING THE ACCELERATOR, AND THERE WERE TEN OR TWELVE
BOYS PULLING IN THE OPPOSITE DIRECTION WITH SO MUCH SUCCESS THAT THE CAR
WAS BARELY ABLE TO CRAWL FORWARD AT A SNAILíS PACE.
i HUNCHED MY SHOULDERS AND BENT MY HEAD AS IF THE DANGER WAS IN
FRONT OF ME, NOT BEHIND, AS IF i WAS ABOUT TO SLAM INTO SOMETHING WITH FULL
FORCE. bENDING MY HEAD AND STOOPING DOWN, i FOCUSED ALL MY MENTAL AND
PHYSICAL RESOLVE ON ACCELERATING THE CAR SO i COULD SHAKE OFF THE GROUP OF
BOYS AND GET AWAY. bUT, GOD ONLY KNOWS HOW MUCH STRENGTH THOSE FILTHY
DEVILS MUSTERED AT THE TIME. mY FIFTEEN HORSEPOWER ENGINE, COUPLED WITH
MY OWN DETERMINATION, WERE PROVING FUTILE. tHE CAR WAS CRAWLING, ONLY
JUST. bEFORE i HAD BARELY COVERED FIFTY OR A HUNDRED YARDS, i WAS CONVINCED
THE CAR WAS GOING TO STALL VERY SOON, OR THE POWER OF THOSE URCHINS THEMSELVES
WOULD SIMPLY PREVENT IT FROM MOVING AHEAD.
bY NOW i WAS CLOSE TO A BREAKDOWN MYSELF. i KEPT THINKING OVER AND
OVER THAT THIS CAR WHICH i HAD IMAGINED WOULD BE ENOUGH TO PROTECT ME
AND BE THE VEHICLE OF MY DELIVERANCE COULD BECOME A NOOSE AROUND MY
NECK OR A NET OF DEATH AND DESTRUCTION. iF i REMAINED INSIDE THE CAR, IN THE
SPACE OF A FEW MINUTES THIS DEVILISH HORDE WOULD STOP ME FROM GETTING
AWAY. tHEY WOULD PULL ME OUT OF THE CAR AND GOD KNOWS WHAT THEY
WOULD DO TO ME THEN. tHE MAN i HAD PUSHED INTO THE GUTTER MIGHT ACTUALLY
CUT ME INTO PIECES AND SCATTER MY BODY ALL OVER THE PLACE.
(nOW AFTER MANY YEARS, AS i WRITE THESE LINES, i REALIZE THAT MY LOGICAL
BRAIN, WHICH THE PHYSIOLOGISTS CALL THE ìRIGHT BRAIN,î WAS NUMB AND i WAS
UNDER THE CONTROL OF MY LEFT BRAIN. tHE LEFT BRAIN, WHICH IS ALSO CALLED THE
ìREPTILIAN BRAIN,î IS COMMON TO HUMANS, CRAWLING AND EGG-LAYING ANIMALS.
iT HAS BEEN SAID THAT IN THE PROCESS OF EVOLUTION IT TOOK TENS OF
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 183
MILLIONS OF YEARS FOR THIS BRAIN TO EVOLVE, AND BECAUSE IT EVOLVED FROM
CRAWLING TO EGG-LAYING ANIMALS TO HUMANS IT IS ALSO CALLED THE REPTILIAN
BRAIN. oUR FUNDAMENTAL AND BASER EMOTIONS ARE THE PRODUCT OF THIS BRAIN:
LUST, FEAR, HUNGER, OPPRESSION, SAFETY, THE FLIGHT INSTINCT, ETC., ALL ARE A
PRODUCT OF THIS BRAIN. iT HAS BEEN DETERMINED THAT IN MOST CRIMINALS, ESPECIALLY
MURDERERS AND RAPISTS, THE LEFT BRAIN IS MORE DOMINANT THAN THE RIGHT
BRAIN. sINCE IT IS LOCATED IN THE LOWER LEFT PART OF THE SKULL, IT IS CALLED THE
ìLEFT BRAIN.î tHE RIGHT BRAIN EVOLVED OVER TENS OF MILLIONS OF YEARS: LOGIC,
FAR-SIGHTEDNESS AND INTELLIGENCE ARE ITS ABILITIES. tHE LEFT BRAIN HAS NO
INTEREST IN LOGIC, INTELLIGENCE OR REMORSE, AND WHEN IT BECOMES DOMINANT
IT SUSPENDS THE ABILITY TO THINK OR REASON. iT HAS ALSO BEEN FOUND THAT IN
SOME TYPES OF MENTAL ILLNESS, THE LEFT BRAIN BECOMES DOMINANT OVER THE
RIGHT BRAIN.)
aNYWAY, RIGHT NOW MY ONLY CONCERN WAS TO GET OUT OF THE CAR AND
ESCAPE. iF THE CAR IS NO LONGER A SANCTUARY, THERE MUST BE A WAY TO ESCAPE
BY GETTING OUT OF ITóIN ANY CASE, THIS WAS MY LOGIC. bUT HOW i WOULD LEAVE
THE CAR AND WHERE, i HAD NO IDEA.
sUDDENLY, i FELT STRANGELY APPREHENSIVE. tHE STREET WAS TOTALLY DESERTED.
tHE EMPTY, DESOLATE ROAD SEEMED DEAFENINGLY SILENT. a LINE FROM
KABIR CAME TO MIND: aN EMPTY CITY STOOD AWFUL ALL AROUND. mClEOD rOAD
HAD NEVER BEEN A BUSY THOROUGHFARE, BUT IT WAS NEVER ENTIRELY DESERTED
EITHER. oNE OR TWO CARS WOULD CERTAINLY PASS BY EVERY OTHER MINUTE. a
SHORT DISTANCE FROM THE aLLAMAíS PLACE WAS THE GRAND MANSION OF HIS WELLKNOWN
FRIEND sIR JOGINDER sINGH. tHERE WERE ALWAYS ONE OR TWO GUARDS
POSTED AT HIS GATE. aT A SHORT DISTANCE FROM sIR JOGINDERíS BUNGALOW WAS
bAHRAMJI KHUDAIJIíS STORE, LOCATED IN A RESIDENTIAL TYPE OF BUILDING. tHEY
STOCKED HIGH QUALITY FOREIGN LIQUOR AND CIGARS. fiHITEWAY-lAIDLAWíS
SUMPTUOUS TWO-STORIED STOREFRONT WAS A COUPLE OF FURLONGS FROM THERE.
sEVERAL CARS AND MANY CARRIAGES WERE ALWAYS SEEN PARKED IN FRONT OF THIS
STORE. GOD KNOWS WHY NEITHER THOSE MANSIONS NOR STORES WERE IN VIEW. iN
FACT, THERE WASNíT A TRAFFIC POLICEMAN AT THE CROSSROADS.
(nOW THAT i THINK ABOUT IT, IT OCCURS TO ME THAT MY SPEED WAS SO SLOW
IT CAN ONLY BE DESCRIBED AS ìA SNAILíS PACE.î tHE BUILDINGS AND STORES i
HAVE MENTIONED ABOVE MUST HAVE BEEN SEVERAL FURLONGS AHEAD. sO HOW
COULD THEY BE VISIBLE FROM WHERE i WAS? bUT AS i HAVE SAID, AT THAT TIME THE
REPTILIAN BRAIN, NOT MY HUMAN BRAIN, WAS IN CONTROL. i AM CONVINCED THAT
HAD i FOUND THE COURAGE AND CONTINUED DRIVING AT WHATEVER SPEED WAS
POSSIBLE, i WOULD CERTAINLY HAVE REACHED SOME SAFE OR POPULATED NEIGHBORHOOD
WITHIN FIVE OR TEN MINUTES: MY PURSUERS WOULD NOT HAVE BEEN
ABLE TO TOUCH ME. tHEY COULDNíT HAVE ENTIRELY PREVENTED THE CAR FROM
184 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
MOVING. iF THEY HAD TRIED TO ATTACK ME THROUGH THE WINDOWS, THEY WOULD
HAVE HAD TO LET GO OF THE CAR, AND IN THE MEANTIME i COULD HAVE INCREASED
MY SPEED AND FREED MYSELF FROM THE DANGER. bUT AT THAT TIME i FELT THAT THE
CAR WAS LIKE A DEATH CELL: IF i REMAINED IN THE CAR, i WOULD SURELY BE KILLED.)
i THOUGHT TO MYSELF THAT IF i COULD FIND A STOUT POLE OR A WALL SOMEWHERE,
i COULD DASH THE CAR AGAINST IT. tHE SOUND OF THE COLLISION WOULD AT
LEAST ATTRACT A FEW PEOPLE, MAYBE EVEN A POLICEMAN, OR PERHAPS i WOULD
BE INJURED OR BECOME UNCONSCIOUS AND THEN THIS GANG OF GHOULS WOULD
SURELY LET GO OF ME. aT THAT TIME, IT DIDNíT OCCUR TO MY REPTILIAN BRAIN THAT IN
ORDER TO HAVE A REAL ACCIDENT THERE HAS TO BE SPEED. mY SPEED MUST HAVE
BEEN AROUND FIVE MILES AN HOUR AND A PERSON NEEDS TO BE GOING AT LEAST
TWENTY OR TWENTY-FIVE FOR A SATISFACTORY ACCIDENT. iT ALSO DIDNíT OCCUR TO ME
THAT i WOULD BE COMPLETELY AT THEIR MERCY IF i WAS INJURED OR BECAME
UNCONSCIOUS. tHEY COULD TAKE ME ANYWHERE ON THE PRETEXT OF GOING TO THE
HOSPITAL. oR, THEY MIGHT INJURE ME FURTHER RIGHT THERE. i CONSIDER IT MY
GOOD FORTUNE THAT i DIDNíT THEN SEE ANY OBJECT TO CRASH MY CAR AGAINST AND
CARRY OUT MY PLAN.
aT THAT MOMENT, i REALIZED THE REPULSIVE MAN IN THE GRUBBY YELLOW
SHIRT WAS ALSO HELPING THE URCHINS STALLING MY CAR. ìiíLL NEVER BE ABLE TO
ESCAPE NOW,î i THOUGHT. aLTHOUGH THE SPEED OF THE CAR HADNíT BEEN
AFFECTED MUCH YET, i WAS CONVINCED THE MAN IN THE DIRTY SHIRT WOULD RISK
HIS VERY LIFE TO STOP THE CAR.
ìHOW LONG CAN A MOTHER GOAT HOPE TO KEEP HER KID?î i THOUGHT. i WAS
REMINDED OF A SERVANT OF MY LATE FATHERíS WHO HAD AN APPROPRIATE, ALBEIT
SLIGHTLY COMICAL, COUPLET FOR SUCH OCCASIONS:
HOW LONG WILL THE BABY MANGOES SHELTER BEHIND THE
LEAVES?
oNE DAY AFTER ALL, THEYíLL GROW INTO FULL MANGOES
aND BE SOLD IN THE MARKET.
nORMALLY, i WOULD SMILE WHEN i RECALLED THE COUPLET, BUT TODAY i FELT
LIKE CRYING. FURTHERMORE, AT THAT TIME i SAW MY CHILDHOOD IN A ROSY-PINKAND-
ORANGE LIGHT, FULL OF HOPE AND AROUSING DESIRES FOR SUCCESS, EVEN
THOUGH IN REALITY MY CHILDHOOD HAD BEEN RATHER UNHAPPY AND NOT WORTH
REMEMBERING.
(iT IS SAID THAT ONCE bISMIL sAʿIDI TOLD JOSH mALIHABADI, ìJOSH sAHIB,
WERE YOUR POETRY NOT LACKING JUST A LITTLE BIT IN THE MOODS OF PAIN AND
SORROWFUL THOUGHTS, YOU WOULD HAVE BEEN AN EVEN GREATER POET.î JOSH
REPLIED, ì¢ERTAINLY NOT. mY POETRY IS NOT LACKING IN PAIN AND SORROWFUL
THOUGHTS. JUST LISTEN TO THIS COUPLET:
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 185
tHE BEST DAYS OF MY LIFE,
tHOSE THAT TELL OF MY WEEPING.î
oN HEARING THIS, bISMIL sAʿIDI BURST OUT LAUGHING AND SAID: ìbY GOD,
JOSH sAHIB, i NEVER HEARD A BETTER COUPLET ON THE THEME OF CHILDHOOD!î
aNYWAY, FORGET ABOUT JOSH sAHIB AND bISMIL sAHIB, THE TRUTH IS THAT MY
CHILDHOOD WAS SPENT BEING THRASHED BY THOSE OLDER THAN ME AND HOWLING
AT THOSE THRASHINGS.) oN THE VERGE OF TEARS, i THOUGHT TO MYSELF, ìi WISH i
WAS SEVEN OR EIGHT YEARS OLD, SO THAT i WASNíT IN THIS CAR, IN THIS STATE,
WHERE MY HONOR AND MY LIFE ARE AT STAKE. aFTER ALL, i HAVENíT HARMED
ANYONE, HAVE i?î
i WAS THEN REMINDED OF MY CHILDHOOD DAYS WHEN i WAS SCOLDED OR
BEATEN FOR EVERY LITTLE THING, OFTEN WITHOUT REASON. aND IF THERE WAS A REASON,
THEN MY INNOCENT LITTLE BRAIN WASNíT ABLE TO UNDERSTAND WHAT IT WAS.
iN THOSE DAYS MY SMALL BRAIN WOULD CONCLUDE: tHERE DOESNíT HAVE TO BE A
REASON FOR EVERYTHING. lATER ON, AFTER i UNDERSTOOD THE DIFFERENCE BETWEEN
CAUSE AND REASON, i CONCLUDED THAT IF ONE KNOWS THE CAUSE OF SOMETHING,
IT DOESNíT FOLLOW THAT ONE CAN ALSO DETERMINE THE REASON. FOR EXAMPLE, A
PERSON IS MURDERED AND AFTER EXAMINING THE BODY THE CONCLUSION IS
REACHED THAT HIS DEATH WAS CAUSED BY A BULLET FROM A PISTOL. tHIS IS SIMPLY
THE CAUSE OF THE MURDER, IT DOESNíT TELL US THE REASON.
aT THAT MOMENT, THE CAUSE FOR MY LIFE BEING AT RISK WAS THAT i WAS AT A
CERTAIN PLACE AT A CERTAIN TIME. iF i HADNíT BEEN THERE, THIS WOULDNíT HAVE
BEEN THE CASE, BUT THERE WAS SOME REASON FOR MY BEING THERE, AND THERE
MUST HAVE BEEN A CAUSE FOR THAT REASON, AND A CAUSE FOR THAT CAUSE Ö
sO, IS THE WHOLE WORLD MERELY A TALE OF CAUSES? iS THERE NO REASON? oR,
PERHAPS, WEíVE COME HERE FOR SOME REASON? mIR tAQI mIR WHISPERED IN MY
EAR: ì¢ONDITIONS AROSE THAT CAUSED ME TO BE HERE FOR MANY DAYS NOW.î
ìfiHAT CAUSES? fiHY WAS i BROUGHT OVER HERE? sO THAT i MIGHT BECOME A
VICTIM OF THESE YOUNG FLESH TRADERS, EVEN AS i RODE IN MY OWN CAR? tO
BECOME THE TARGET OF THE UNHOLY ACTIVITIES OF THEIR LEADER?î i WONDERED TO
MYSELF IN A STATE OF NEAR HYSTERIA.
sUDDENLY i HEARD A NOISE IN THE STREET FROM BEHIND THE CAR. iT SEEMED
AS IF SOME MORE PEOPLE HAD COME OUT TO HELP MY ENEMIES. tHE CARíS
SPEED SLOWED FURTHER. PERHAPS IT WAS MY IMAGINATION, BUT i DECIDED THAT
REMAINING THERE FOR EVEN ONE MORE MOMENT WAS AS GOOD AS INVITING SOME
CATASTROPHE. i RECALLED THAT MY DEVILISH PURSUERS HAD STAYED AWAY FROM THE
aLLAMAíS BUNGALOW. PERHAPS THEY WERE AFRAID OF GOING INTO HOMES? sO THE
BEST THING FOR ME WOULD BE TO STOP THE CAR BY THE SIDE OF SOME GATE IN
SUCH A WAY AS TO BLOCK THE GATE, JUMP OUT AND RUN FOR IT. bUT WHO WOULD i
186 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
RUN TO? fiONíT THESE PEOPLE POUNCE ON ME INSTANTLY AND GRAB HOLD OF ME? i
WAS THINKING ABOUT THESE POSSIBILITIES WHEN, ON MY SIDE OF THE ROAD, THAT
IS, ON THE LEFT SIDE, i CAUGHT SIGHT OF WHAT SEEMED TO BE A SAFE BUNGALOW.
ìGOTCHA!î i SAID TO MYSELF WITH JOY IN MY HEART.
fiITH A FORCEFUL JERK TO THE STEERING WHEEL, i TURNED THE CAR INTO THE
GATE AT AN ANGLE AND STOMPED ON THE BRAKE WITH ALL MY STRENGTH. tHE FORCE
OF MY SWINGING TO THE LEFT AND THE CLAMPING OF THE BRAKES MADE THE CAR
STALL AND STOP AT AN ANGLE IN THE CENTER OF THE GATE. mY PURSUERS, ALSO
UNABLE TO BEAR THE CENTRIFUGAL FORCE OF THE SUDDEN MOVEMENT, FELL OFF AND
WERE THROWN ABOUT. i LOOKED BACK AND SAW THAT MY NEAREST PURSUER WAS AT
LEAST TEN OR TWELVE FEET BEHIND ME. i GRABBED THE IGNITION KEY AND RAN
BLINDLY TOWARD THE BUNGALOW. tHAT IS, i ENTERED WHAT i THOUGHT WAS MY
REFUGE.
a RATHER LARGE BUNGALOW, THOUGH SOMEWHAT DREARY LOOKING. tHERE
WAS NO SERVANT OR WATCHMAN OR EVEN A GARDENER AT THE FRONT. tHERE WAS A
VERANDAH WITH A HIGH PLINTH WITH OLD-FASHIONED EASY CHAIRS AND FROG CHAIRS
AND A DRESSING TABLE AGAINST THE WALL WITH A FULL LENGTH MIRROR. a HAT-STAND
STOOD BESIDE IT. i HADNíT THE TIME OR THE COURAGE TO STAY AND OBSERVE MORE.
dASHING ACROSS THE LENGTH OF THE VERANDAH, i SAW WHAT SEEMED TO BE A
ROOM AT THE END. tHE DOOR LEADING TO IT WAS SLIGHTLY AJAR SO i STEPPED
QUICKLY INSIDE AND DREW THE BOLTS.
tHERE WAS A FAINT SMELL OF DISINFECTANT IN THE ROOM. oPENING MY EYES
WIDE, i LOOKED AROUND AND REALIZED i WAS IN A BATHROOM. i FELT AROUND AND
FOUND THE LIGHT SWITCH. a YELLOWISH LIGHT CAME ON AND i SAW THAT IT WAS A
SPACE SEVEN OR EIGHT FEET IN LENGTH AND ABOUT THE SAME IN WIDTH WITH A
TOILET SEAT AND AN AREA FOR BATHING. iNSTEAD OF A DRY COMMODE, THERE WAS A
NEW-FASHIONED FLUSH SYSTEM WITH AN IRON CISTERN ABOVE; A CHAIN WAS
SUSPENDED FROM THE CISTERN. tHERE WERE VERY FEW BATHROOMS OF THIS STYLE
IN iNDIA AT THAT TIME. i WAS, HOWEVER, FAMILIAR WITH THEM BECAUSE TWO BIG
RAILWAY COMPANIES, THE GREAT iNDIAN PENINSULAR rAILWAY AND THE bOMBAY
bARODA & ¢ENTRAL iNDIA rAILWAY, HAD ORDERED SUCH BATHROOMS INSTALLED IN
THE FIRST-CLASS WAITING ROOMS. i WORKED FOR THE G. i. P. rAILWAY MYSELF.
i HAD A TERRIBLE URGE TO PEE. PERHAPS IT WAS ON ACCOUNT OF FEAR OR
MAYBE i REALLY NEEDED TO GO. i DIDNíT EXACTLY FEEL SAFE, BUT THE URGE TO
RELIEVE MYSELF WAS VERY STRONG AND i DIDNíT KNOW WHEN i WOULD NEXT HAVE
A CHANCE TO DO SO. i HAD BARELY TOUCHED MY TROUSER BELT WHEN A LOUD
INCESSANT POUNDING STARTED ON THE DOOR. GOD KNOWS IF THESE WERE MY
ENEMIES OR SOME MEMBER OF THE HOUSEHOLD WHO SUSPECTED THERE WAS AN
INTRUDER IN THE BATHROOM. aNYWAY, i WAS IN NO CONDITION TO OPEN THE DOOR
AND COME OUT. aND THERE SEEMED NO POSSIBILITY OF REMAINING HIDDEN IN
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 187
THE BATHROOM EITHER. fiHERE WOULD i GO IF i CAME OUT? tHEN i GLANCED AT
THE OPPOSITE WALL AND NOTICED A DOOR. i DIDNíT CARE WHERE IT LED, IT WAS AN
ESCAPE ROUTE.
sOFTLY, i SLID THE BOLTS ON THE FAR DOOR. tHANK GOD, THE DOOR ISNíT
LOCKED ON THE OTHER SIDE, i THOUGHT TO MYSELF. iTíLL TAKE THEM LONGER TO
BREAK DOWN TWO DOORS, AND THE PANDEMONIUM CREATED BY THE BREAKING
DOORS WILL SURELY ATTRACT SOMEONEíS ATTENTION. aT THAT MOMENT i HAD FORGOTTEN
THAT THE DEVIL-HORDE COULDNíT ENTER ANY HOMES AND THEREFORE IT WAS
VERY LIKELY THAT THE PERSON OR PERSONS BEATING ON THE DOOR WERE CONNECTED
TO THE OWNER OF THE HOUSE.
fiHEN i CAME THROUGH THE DOOR i SAW THAT i WAS BACK IN THE SAME
VERANDAH AND THAT IT ACTUALLY EXTENDED MUCH FURTHER. oN MY RIGHT WAS AN
ENCLOSING WALL SO THE VERANDAH WAS NOW A CORRIDOR. rIGHT NEXT TO THE
BATHROOM DOOR WAS ANOTHER DOOR THAT MUST OPEN DIRECTLY OUTSIDE. tHE
DOOR WAS PARTIALLY OPEN AND THERE i COULD CLEARLY SEE THREE SERVANTS. tHEY
WERE SEATED ON THE DOORSTEP AND THE THRESHOLD, AND THEY WERE SO ABSORBED
IN GABBING THAT THEY WERENíT AWARE OF MY PRESENCE AT ALL. i DIDNíT
WANT TO DRAW THEIR ATTENTION EITHER.
i MUST HAVE CREPT ALONG STEALTHILY LIKE A CAT FOR SOME TEN YARDS WHEN i
NOTICED A DOOR THAT OPENED INTO THE HOUSE. tHEN i HEARD THE MUFFLED
SOUND OF THE BATHROOM DOOR CAVING IN SO i DIDNíT LINGER ANY LONGER AND
STEPPED INSIDE THE HOUSE.
oNCE AGAIN i WAS IN A HALL, A SPACIOUS HALL WITH ARCHWAYS. iT GAVE THE
IMPRESSION OF A HOUSE OF BUSY INHABITANTS. tWO WOMEN SAT ON A WIDE
BEDSTEAD FINELY CHOPPING SOME BETEL NUTS. i CANíT RECALL THEIR FACES OR THEIR
DRESS NOW. a PLUMP, SOFT-BODIED, FAIRLY GOOD-LOOKING MIDDLE-AGED
WOMAN WEARING A SARI WAS SEATED ON A LARGE PADDED FROG CHAIR NEAR THE
BEDSTEAD. aCROSS FROM HER, TWO RELATIVELY YOUNGER WOMEN SAT ON CHAIRS,
KNITTING. i JUDGED THAT THE MIDDLE-AGED WOMAN WAS THE ONE AMONG THEM
WITH SOME AUTHORITY AND i OFFERED MY GREETINGS TO HER. i THINK THAT FROM
MY BODY LANGUAGE AND SPEECH AND MY AIR OF BEING TOTALLY CONFUSED AND
RATTLED SHE SENSED THAT i WASNíT A VAGRANT OR A HOUSEBREAKER. tHE OTHER
WOMEN CERTAINLY SEEMED A LITTLE NERVOUS, BUT THEY DIDNíT PROTEST OR RAISE
AN ALARM. PERHAPS THEY FELT SAFE IN THE PRESENCE OF THE OLDER WOMAN. sHE
DIDNíT RETURN MY GREETING. iNSTEAD SHE INQUIRED IN A COLD VOICE: ìfiHO ARE
YOU? HOW DID YOU GET IN HERE? GET OUT OF HERE AT ONCE.î sHE SEEMED MORE
ANNOYED THAN AFRAID.
ìFOR GODíS SAKE, GIVE ME SHELTER. iíM IN GRAVE DANGER,î i REPLIED IN A
WHISPER.
ìfiHY? aRE THE POLICE AFTER YOU?î
188 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
ìiíLL EXPLAIN LATER. tHERE ARE NO POLICE. iíM A RESPECTABLE ENGINEER.
sOME ROGUES ARE AFTER ME.î
ìrOGUES CHASE ROGUES. rESPECTABLE PEOPLE HAVE NOTHING TO DO WITH
THEM. nOW GET OUT. aT ONCE. oR iíLL CALL THE SERVANTS.î
ìHOW WILL YOU FACE GOD IF iíM KILLED?î sUDDENLY THE IDEA FLASHED IN
MY MIND THAT THIS WOMAN, EVEN THOUGH SHE LOOKED HIGHLY RESPECTABLE,
WAS NOT THE LADY OF THE HOUSE. ìFOR GODíS SAKE TAKE ME TO SOME RESPONSIBLE
PERSON!î
mY ARROW HAD FOUND ITS MARK. sHE CHANGED HER POSTURE AND SAID,
ìrESPONSIBLE? fiHO ELSE IS RESPONSIBLE HERE? fiHAT IS YOUR STORY?î HER TONE
WAS SHARPER NOW; THE EMPHASIS WAS ON THE PRONOUN ìYOUR.î
HALTINGLY, i BEGAN TO TELL MY STORY. i WAS AFRAID THAT THE INCIDENT WAS
SO BIZARRE THEY WOULDNíT BELIEVE ME. iF SOMEONE NARRATED SUCH A TALE TO
ME, i WOULD CONSIDER IT MADMANíS CHATTER. tHIS APPREHENSION MADE MY
VOICE SOUND UNCONVINCING, EVEN TO MY OWN EARS, AND IT SEEMED MORE
IMPOSSIBLE THAN EVER. aNYWAY, THOSE PEOPLE APPEARED TO LISTEN ATTENTIVELY.
tHE TALE WASNíT EXACTLY LONG. iT WOULD TAKE ONLY A FEW MINUTES TO
FINISH SO i CONTINUED AND PRAYED IN MY HEART THAT THEY WOULD BELIEVE ME.
tHE DOOR THROUGH WHICH i HAD ENTERED REMAINED OPEN, AS BEFORE.
eVERYONE WAS ENGROSSED IN MY STORY. sUDDENLY THE MAN IN THE GRUBBY
YELLOW SHIRT WALKED IN, QUITE CASUALLY. HE HAD A LONG-BARRELED PISTOL IN HIS
HAND.
i RAN AND TRIED TO HIDE BEHIND THE OLDER WOMANíS CHAIR. tHE MAN
POINTED THE GUN STRAIGHT AT THE WOMAN AND SAID IN A STRANGELY ALOOF, COLD,
HARSH, AND EXTREMELY DERISIVE TONE: ì¢OME, TELL ME, WHAT AM i TO YOU?î
iNSTEAD OF ìYOU,î HE USED THE URDU EQUIVALENT OF THE FRENCH TU, INDICATING
FAMILIARITY OR CONTEMPT.
a SENSATION OF TERROR GRIPPED MY BODY. ìfiERE THEY ALL IN IT TOGETHER?î i
ASKED MYSELF IN TERROR AND AMAZEMENT. nONE OF US WERE IN A STATE TO DO
ANYTHING TO REMOVE THIS NEW DANGER. tHE WOMEN WERE FROZEN AS IF CARVED
IN STONE. tHERE WAS A DOOR RIGHT BEHIND THE PLACE WHERE i WAS TRYING TO
HIDE INEFFECTUALLY, BUT SOME INSTINCT TOLD ME THERE WAS SOMEBODY BEHIND
THAT DOOR.
bEFORE i COULD MAKE UP MY MIND WHETHER THERE REALLY WAS SOMEONE
BEHIND THE DOOR, OR WHETHER HE WAS FRIEND OR FOE, THE DOOR OPENED WITH A
THUNDEROUS CLAP AND SOMETHING BLACK CAME OUT MAKING A LOUD SOUGHING
WHOOSHING SOUND. iT SWEPT INTO THE COURTYARD AND ESTABLISHED ITSELF THERE
LIKE A WHIRLWIND OR DUST DEVIL.
i SAW THAT ALL THE WOMEN LAY ALMOST UNCONSCIOUS, THEIR FACES COVERED
WITH THEIR DUPATTAS. tHE GUNMAN WAS ON HIS KNEES, HIS FACE BOWED. HIS
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 189
HANDS WERE FOLDED AT HIS CHEST IN A MANNER THAT SUGGESTED OBEISANCE. HIS
PISTOL HAD FALLEN FROM HIS HANDS AND LAY AT THE FEET OF THE MIDDLE-AGED
WOMAN, BUT THE LADY HERSELF SEEMED COMPLETELY DETACHED FROM EVERYTHING.
sHE HAD COVERED HER HEAD AND FACE WITH THE HEM OF HER SARI AND
HAD COLLAPSED IN THE FROG CHAIR LIKE A RAG DOLL. mY FEET WEIGHED A TON AND
MY HEART HAD SUNK INTO MY SHOES, BUT MY BRAIN (THE REPTILIAN BRAIN) WAS
STILL SOMEWHAT ALERT. i SAID TO MYSELF THAT THERE COULDNíT BE A BETTER
OPPORTUNITY THAN THIS TO MAKE GOOD MY ESCAPE. PERHAPS i WOULD EVEN BE
ABLE TO GET MY CAR OUT OF THE GATES OF THIS HOUSE.
FULL OF FEAR, ALMOST DRAGGING MY FEET, i CAME OUT OF MY REFUGE (PAH!
WHAT A REFUGE!) LIKE A THIEF. tHAT BLACK FUNNELING WHIRLWIND REMAINED AS IT
WAS IN THE COURTYARD. i COULD HEAR THE WHOOSHING SOUND IT MADE. nOW IT
SEEMED ALMOST LIKE A WAIL. i DONíT KNOW WHY, BUT i FELT THAT i SHOULDNíT
MAKE THE SLIGHTEST NOISE. fiAS IT A DUST DEVIL, OR SOME BAD SPIRIT, OR A
SCOURGE FROM GOD? bUT WHAT EFFECT COULD MY SILENCE HAVE ON IT? PERHAPS
THAT TOO WAS A THOUGHT OF MY REPTILIAN BRAINóCRAWLING ANIMALS OFTEN
FREEZE WHEN FACED WITH DANGER, AS IF THEYíRE DEAD.
aS i CREPT BY THE MAN WEARING THE DIRTY YELLOW SHIRT, i HAD AN URGE TO
DELIVER A SOLID KICK TO HIS RIBS. tHAT BASTARD WAS NOW DEAD ANYWAY. bUT
WHAT IF HE WASNíT? aND THE BLACK WHIRLING FUNNEL? i RESTRAINED MYSELF.
tHEN IT OCCURRED TO ME TO PICK UP THE PISTOL JUST IN CASE THOSE FIENDS WERE
WAITING FOR ME OUTSIDE. bUT WHATEVER SENSE REMAINED IN ME CAUTIONED
THAT i DIDNíT KNOW HOW TO USE FIREARMS, NOR DID i HAVE A FIREARM LICENSE, SO
WHY INVITE MORE TROUBLE UPON MYSELF? i HAD DIED A THOUSAND DEATHS
BEFORE i SURVIVED THIS ONE ORDEAL, i SHOULD GET OUT WITHOUT COMMITTING ANY
MORE FOLLIES.
ìbUT SUPPOSE THOSE WOMEN AND THE MAN IN THE GRUBBY YELLOW SHIRT
ARE ACTUALLY DEAD? tHE POLICE MIGHT PURSUE MEÖ,î i TOLD MYSELF FEARFULLY.
ìsTUPID,î i SCOLDED MYSELF IN MY HEART, ìIF YOU HANG AROUND HERE ANY
LONGER THE POLICE WILL SURELY COME, EVEN IF THEY WERENíT COMING IN THE FIRST
PLACE. sO WHAT IF THESE PEOPLE ARE DEAD? iTíS NONE OF YOUR BUSINESS. bUT IF
THE POLICE CATCH YOU HERE, YOUíRE IN TROUBLE. ffiOUíLL BE TAKEN AROUND
EVERYWHERE IN FETTERS. ffiOUíLL LOSE YOUR JOB TOO. mOVE YOUR FEET AND GET OUT
OF HERE IMMEDIATELY.î
i WALKED OUT GINGERLY, AS IF ON EGG SHELLS. iT WAS DARK BY THE DOOR IN
THE CORRIDOR. PERHAPS THE THREE SERVANTS HAD FALLEN ASLEEP OR WERE
UNCONSCIOUS, WHO KNOWS? i STEPPED OVER THEIR BODIES AND CAME OUT OF
THAT HOUSE OF GHOSTS AND FEARS.
tHE STREET LAMPS WERE LIT. a VEHICLE OR TWO PASSED BY SLOWLY. eVERYTHING
SEEMED NORMAL, YET CHANGED SOMEHOW. i COULDNíT PUT MY FINGER ON
190 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
EXACTLY HOW IT HAD CHANGED. iN A LITTLE WHILE IT OCCURRED TO ME THAT mClEOD
rOAD WASNíT AS DESERTED AS IT HAD BEEN IN THE MORNING. aLSO, WHEN i HAD
ENTERED THAT BUNGALOW FOR REFUGE IT WAS BROAD DAYLIGHT, PERHAPS ELEVEN
OíCLOCK OR SO, AND i WAS SURE i HADNíT STAYED IN THAT HOUSE MORE THAN FIFTEEN
MINUTES. sO THEN WHY WAS IT DARK OUTSIDE?
nERVOUSNESS AND FEAR MADE ME FEEL NAUSEOUS. mY MOUTH WAS FILLED
WITH BRACKISH WATERY SALIVA, AND BEFORE i COULD CONTROL MYSELF i THREW UP
REFLEXIVELY, EMITTING A DEEP-THROATED, BUFFALO-LIKE SOUND. oNLY A MOUTHFUL
OF BITTER BLACKISH-YELLOW SUBSTANCE CAME OUT. i HAD HAD A VERY LIGHT
BREAKFAST AND MANY CUPS OF TEA THAT MORNING, AND THAT WAS SEVERAL HOURS
AGO (OR PERHAPS AN ENTIRE DAY HAD PASSED), SO WHAT ELSE COULD i EXPEL
FROM MY STOMACH? PANTING LIKE A HEAT-STRUCK DOG, i TRIED TO CONTROL MY
HEAVING CHEST AND STOMACH. mY NAUSEA HADNíT SUBSIDED DESPITE THE VOMITING.
i RECALLED THE BEGINNING OF THE NOVEL tAUBATUíN-nAṣū̄ḥ (nASUHíS
rEPENTANCE) WHEN nASUH HAD VOMITED WITH GREAT FORCE (BLACK LIKE A
CROWíS FEATHERói ALSO RECALLED ANOTHER STORY i HAD READ AS A CHILD IN WHICH
THE VOMIT WAS AS BLACK AS A CROWíS FEATHER). i ASKED MYSELF ANXIOUSLY, ìaM
i TOO SUFFERING FROM GASTROENTERITIS THEN? oR HAVE i PUT POISON IN MY
MOUTH SOMEHOW?î
mY HEAD SPUN UNCONTROLLABLY AND i CRASHED AGAINST A NEARBY WALL. mY
HAND HIT THE WALL, AS IF TO BREAK MY FALL OR TO SAVE ME FROM INJURY. i FELT A
SHARP PAIN IN MY PALM, LIKE THE STING OF A SCORPION. aNXIOUS, i EXAMINED
MY PALM CLOSELY AND FOUND THAT A THICK NAIL THAT WAS PROBABLY JUTTING OUT
FROM THE WALL HAD PIERCED MY PALM CREATING A HALF-INCH DEEP WOUND. tHE
GASH BLED PROFUSELY. mY SHIRT SLEEVE AND TROUSERS WERE SPOTTED WITH
BLOOD. dIZZINESS AND FEAR, TOGETHER WITH THIS WOUND, MADE ME MORE
DISTRAUGHT THAN EVER.
i HAD NO ALTERNATIVE BUT TO STAY PUT, SO i LEANED AGAINST THE WALL AFTER
CHECKING IT THOROUGHLY. i BANDAGED MY PALM TIGHTLY WITH A HANDKERCHIEF
TO STEM THE BLEEDING. aFTER A LONG TIME, i FELT A LITTLE BETTER. i SAID TO MYSELF
THAT ALL THIS MUST SURELY BE THE WORK OF THE JINNS, OR EVIL SPIRITS, AND i
SHOULD RECITE THE QURʾāNIC VERSE OF ìtHE ¢HAIRî TO WARD OFF THEIR EVIL. bUT i
COULDNíT REMEMBER THE WORDS, SO i BEGAN RECITING THE SHORT CHAPTER CALLED
iKHLāṣ (DECLARING THE iNDIVISIBLE oNENESS OF GOD) AND ANOTHER QURʾāNIC
VERSE ìlā ḥAULA VA Lā QUVVATA ILLā BIíaLLāHî (tHERE IS NO FORCE AND NO
POWER EXCEPT GOD) OVER AND OVER AGAIN. aFTER SOME TIME MY HEARTBEAT
STABILIZED. mY THROAT FELT PARCHED, BUT WHERE COULD i FIND WATER THERE? i
TOLD MYSELF THAT i SHOULD BE BRAVE, CROSS THE ROAD, GET INTO MY CAR AND
MAKE A RUN FOR IT. tHIS WASNíT THE TIME TO LOOK FOR WATER OR WORRY ABOUT
GETTING PROPER MEDICAL TREATMENT FOR MY HAND.
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 191
i DRAGGED MY TIRED FEET AND WALKED TOWARDS THE GATE OF THE BUNGALOW
WHERE i HAD LEFT MY CAR. i WAS A LITTLE AFRAID THAT THOSE VICIOUS URCHINS
MIGHT STILL BE THERE. bUT THEIR LEADER LAY INSIDE (PRESUMABLY DEAD), SO
THOSE DIRTY BASTARDS MUST HAVE GONE AWAY TOO. HAVING VOICED THESE
THOUGHTS TO MYSELF, i HASTENED TOWARDS THE GATE.
fiHEN i WAS RUNNING TOWARDS IT FOR REFUGE, THE BUNGALOW HAD SEEMED
EXTREMELY LARGE. i HAD IMAGINED THE FRONT VERANDAH AND THE INNER CORRIDOR
TO BE AT LEAST TWO HUNDRED AND FIFTY FEET LONG. sURPRISINGLY, THE DISTANCE
NOW WAS MUCH LESS. i HAD BARELY WALKED A DOZEN STEPS WHEN i SAW THE
GATE, BUT MY CAR WASNíT THERE. i WAS SHOCKED FOR A MOMENT, BUT THEN i
REMEMBERED THAT i HAD LEFT MY CAR AT SUCH AN ANGLE THAT IT BLOCKED ACCESS
THROUGH THE GATE, SO SOMEONE MAY HAVE PUSHED IT TO ONE SIDE.
bUT THE CAR HAD DISAPPEARED, AND SO THOROUGHLY THAT THERE WERENíT
EVEN TIRE TRACKS AT THE GATE, NO TELLTALE SIGNS OR DRAG MARKS SCORED ON THE
EARTH BY MY SLAMMING ON THE BRAKES TO STOP AND MAKE A SHARP TURN INTO
THE GATE. mY CAR HAD VANISHED AS IF IT HAD NEVER EXISTED. ìdID SOMEONE
STEAL IT?î i WONDERED. bUT PEOPLE DIDNíT STEAL CARS IN THOSE DAYS. fiHERE
WOULD A CAR THIEF SELL IT? FEW PEOPLE HAD CARS THEN, AND THEY WERE MOSTLY
LAWYERS, DOCTORS OR GOVERNMENT OFFICERS. aNYWAY, EVEN IF A THIEF HAD STOLEN
IT, i DIDNíT HAVE THE COURAGE OR THE TIME TO GO LODGE A COMPLAINT. fiHAT
STORY WOULD i GIVE THE POLICE? fiHAT WAS i DOING THERE IN THAT BUNGALOW?
tHERE WAS NO SIGN A CAR WAS EVER PARKED THERE. aLL i HAD WERE THE KEYS IN
MY POCKET. i CHECKED MY POCKET, THE KEYS WERE THERE.
tO HAVE HIS CAR STOLEN WAS NOT AN ORDINARY EVENT FOR A RAILWAY ASSISTANT
ENGINEER. i SHOULD HAVE HAD THE MATTER INVESTIGATED IMMEDIATELY.
oBVIOUSLY, IT WOULDNíT BE EASY FOR ME TO BUY ANOTHER ONE. PERHAPS i
WOULD NEVER OWN ANOTHER CAR AT ALL. bUT AT THE TIME i HAD NO OPTION. i ALSO
FIGURED THAT A CAR WASNíT LIKE A NEEDLE THAT COULD GET LOST AND NEVER BE
FOUND. aT THAT TIME THE BEST THING FOR ME TO DO WAS LEAVE AS SOON AS
POSSIBLE. oFTEN THE HUMAN BRAIN CANíT COMPREHEND SIMPLE THINGS, AND THIS
WAS CERTAINLY BEYOND WHAT WAS NATURAL AND NORMAL. iT WAS BEST NOT TO
INVESTIGATE IT ANY FURTHER. i WAS SAVED BY GODíS GRACE. iíVE HEARD OF PEOPLE
LOSING THEIR MINDS FROM FEAR, EVEN OF DYING IN SUCH CIRCUMSTANCES. i
NEEDED TO THINK OF MYSELF, NOT THE CAR.
¢ONVINCING MYSELF THIS WAS THE BEST ROUTE TO TAKE, i CAME OUT ONTO THE
ROAD UNDER THE STREET LAMPS. FOR SOME REASON, MY CLOTHES SEEMED YELLOWISH
TO ME. PERHAPS IT WAS THE DIM, HALF-BLIND MUNICIPAL LIGHTING. a
TONGA WAS APPROACHING SO i HAILED IT AND GOT IN. mY CLOTHES SEEMED EVEN
MORE YELLOW NOW. GOD FORBID, DID i HAVE JAUNDICE? JUST THEN THE DRIVER
TURNED AND LOOKED AT ME CURIOUSLY. PERHAPS HE HAD NOTICED THE SPLOTCHES
192 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
OF RED ON MY CLOTHES. oR WERE MY CLOTHES REALLY YELLOW? sUDDENLY i WAS
WRACKED WITH A FEVERISH TREMOR. mY VOICE SHAKING, i ASKED THE DRIVER TO
GET ME TO THE RAILWAY STATION IN A HURRY BECAUSE i HAD TO CATCH A TRAIN. tHE
mUGHALPURA sTATION WAS NEARBY. i WAS THERE IN MINUTES. tHE PATHANKOT
eXPRESS WAS PULLING IN WHEN i ARRIVED. i BOUGHT A TICKET, BOARDED, AND
SANK INTO A SEAT. sO WHAT IF i DIDNíT KNOW ANYONE IN PATHANKOT. tHE MAN
IN THE GRUBBY YELLOW SHIRT AND THE BLACK WHIRLING FUNNEL WERENíT THERE
EITHER.
*
a FRIEND OF MINE READ ALL THAT iíVE WRITTEN ABOVE AND SAID: ìfiHAT NONSENSE
HAVE YOU WRITTEN HERE? aRE YOU WRITING A MEMOIR OF YOUR LIFE OR MADE UP
STORIES AND EVENTS FROM YOUR DREAMS?î
ìffiOU KNOW THAT iíVE SWORN NOT TO WRITE EVEN ONE FALSE WORD IN MY
AUTOBIOGRAPHY. tHATíS WHY i MAKE YOU READ EVERY PAGE SO THAT IF THERE IS
ANY ERROR OR UNTRUTH YOU CAN HELP ME CORRECT IT.î
ìtHAT MAY BE, BUT WHAT THE HELL DO i CORRECT HERE? dAMN IT, YOUíVE
CROSSED ALL THE LIMITS THIS TIME. ffiOU SAY YOU HAD AN aMBASSADOR IN THOSE
DAYS. ffiOU IDIOT! tHAT CAR WAS MANUFACTURED FOR THE FIRST TIME BY THE bIRLAS
IN 1957, WELL AFTER iNDIAíS PARTITION IN 1947. tHEY BOUGHT THE BLUE PRINTS OF
THE eNGLISH mORRIS oXFORD AND MANUFACTURED A CAR CALLED HINDUSTAN 14.
fiHEN THE mORRIS oXFORD MODEL CHANGED AFTER A COUPLE OF YEARS, THE bIRLAS
CAME UP WITH A COPY OF THE NEW MODEL AND CALLED IT lANDMASTER, AND THEN
AFTER A FEW MORE YEARS THE HINDUSTAN aMBASSADOR WAS BUILT ACCORDING TO
THE LATEST DESIGN OF THE mORRIS oXFORD. HOW ON EARTH COULD YOU HAVE
DRIVEN AN aMBASSADOR AND GONE TO MEET aLLAMA iQBAL IN 1937?î
ìi MUST HAVE FORGOTTEN THE MODEL!î i RETORTED IRRITABLY. ìffiOU KNOW i
ALWAYS HAD A CAR FROM THE TIME i GOT A JOB.î
ìHOW COULD YOU FORGET THE MODEL? ffiOU FORGOT THE MODEL OF YOUR VERY
FIRST CAR SO WELL THAT YOU CREATED SOMETHING THAT DIDNíT EXIST? aND SON, TELL
ME, HOW COULD THE aLLAMA LIVE ON mClEOD rOAD IN 1937? iN oCTOBER OF
1936, OR SOMETIME THEREABOUTS, aLLAMA sAHIB HAD GOTTEN THE CONSTRUCTION
OF JAVED mANZIL COMPLETED ON mUIR rOAD AND HE MOVED THERE SOON AFTER.
iN WHICH LIFE DID YOU MEET HIM ON mClEOD rOAD IN 1937?î
ìmAYBE IT WAS mUIR rOAD, NOT mClEOD rOAD.î i WAS ANNOYED. ìtHEREíS
NOT MUCH DIFFERENCE IN THE NAMES. ¢AN A PERSON REMEMBER SUCH MINUTE
DETAILS? PERHAPS THATíS WHY i DIDNíT SEE sIR JOGINDER sINGHíS BUNGALOW AND
THOSE BIG SHOPS THERE.î
sHAMSUR rAHMAN FARUQI • 193
ìdOUBTLESS, A PERSON CANíT REMEMBER EVERY MINUTE DETAIL, BUT WEíRE
TALKING ABOUT IMPORTANT DETAILS HERE.Ö fiELL, IF ONE WERE WRITING AN ORAL
ROMANCE LIKE THE aMīR ḤAMZA AND CALLING IT AN AUTOBIOGRAPHY, THATíS
SOMETHING ELSE AGAIN.î
ìdONíT DRAG THE aMīR ḤAMZA INTO THIS. tHERE CANíT BE A BETTER HISTORICAL
NARRATIVE,î i SAID ENRAGED.
ìaS YOU WISH, BUT DONíT SAY THAT IN FRONT OF EVERYONE OR THEYíLL SEND
YOU TO THE LUNATIC ASYLUM. aND MY DEAR, THE URCHINS YOU TALK ABOUT, YOU
MUST HAVE READ ABOUT THEM IN THE NEWSPAPERS. tHEY BELONGED TO A
NOMADIC TRIBE CALLED THE KANJAR WHICH PRACTICED CRIME AS A PROFESSION. a
BAND OF KANJARS CAME INTO lAHORE ONE TIME AND MEMBERS OF THEIR
COMMUNITY, ESPECIALLY THE YOUNG CHILDREN, WERE OFTEN CAUGHT COMMITTING
PETTY THIEVERY. tHEY HAD SET UP CAMP IN THE bAGHANPURA NEIGHBORHOOD,
NOT ON mClEOD OR mUIR rOAD. ffiOU MAY HAVE PASSED THAT WAY ONE TIME
AND MUST HAVE HAD A DREAM ABOUT THEM LATER. nOW YOUíRE EMBROIDERING
YOUR AUTOBIOGRAPHY WITH THEIR TALE.î
ìoKAY, HAVE IT YOUR WAY, BUT LOOK AT THIS!î i THRUST MY PALM RIGHT UNDER
MY FRIENDíS NOSE, ALMOST INTO HIS EYES. tHE OLD WOUNDíS DEEP SCAR WAS
STILL VERY CLEAR ON MY PALM. ìffiOU BASTARD, WHAT IS THIS THEN?î i SAID THROUGH
GRITTED TEETH. ìi CAN EVEN TELL YOU THE NAME OF THE DOCTOR IN PATHANKOT
WHO TREATED THIS WOUND.î
mY FRIEND WAS SHOCKED INTO SILENCE FOR A MOMENT. iT WAS QUITE
APPARENT THAT HE WAS AT A LOSS. bUT HE WAS NO LESS ADAMANT THAN ME. aFTER
A WHILE HE SAID, ìtHE SCAR DOESNíT PROVE THAT THIS WOUND WAS INFLICTED AT
THE TIME AND PLACE YOU MENTIONED IN YOUR STÖ i MEAN IN YOUR MEMOIR.î
ìoKAY, MAYBE NOT, BUT IF THE DOCTOR IS ALIVE, AT LEAST HE CAN VERIFY THE
TIME AND THE YEAR.î
ìiTíS BEEN MORE THAN FIFTY YEARS. GOD KNOWS WHERE THE DOCTOR IS, OR
WHETHER HEíS ALIVE OR DEAD.î
ìeVEN GALEN DIDNíT HAVE A CURE FOR DOUBT, AND EVEN sOCRATES COULDNíT
TREAT OBSTINACY.î
ìGRANTED. bUT iíM ARGUING BECAUSE YOU ASKED ME YOURSELF TO READ THE
BOOK LIKE A HOSTILE CRITIC. i DONíT WANT EVEN ONE ERRONEOUS THING TO FIND ITS
WAY IN.î
ìsO OKAY, BECAUSE YOU DIDNíT REALLY FIND ANYTHING SO FAR, YOU BEGAN TO
INVENT FALSE CHARGES AGAINST ME.î
ìtHE FACT OF THE MATTER IS THAT THERE WERE MANY THINGS IN YOUR
NARRATIVE THAT BOTHERED ME, BUT THEY WERENíT SO IMPORTANT, OR NOTICEABLE.
iN THIS PARTICULAR CHAPTER, YOU HAVENíT WRITTEN EVEN A WORD THAT COULD BE
CONSIDERED FACTUAL.î
194 • tHE aNNUAL OF URDU sTUDIES
ìmANY THINGSóSUCH AS?î i ASKED MAKING A GREAT EFFORT TO SUPPRESS MY
ANGER
ìffiOU HAVENíT MENTIONED ANYTHING ABOUT THE aLLAMAíS VOICE. bY THEN,
HIS VOICE HAD BECOME COMPLETELY HOARSE.î
ìiíVE ALREADY SAID THAT i DONíT REMEMBER ANY DETAILS OF THAT MEETING.î
ìbUT SUCH AN IMPORTANT THING.Öî
ìsHUT UP. dO YOU KNOW THAT THE WORD ëINCIDENTí (VāQIʿA) ALSO MEANS
ëREALITYí AND ëDREAM,í AND EVEN ëDEATH,íî i SAID WITH GREAT PRIDE, AS IF i WAS
DISCLOSING A MARVELOUS DISCOVERY TO HIM.
ìtHEN i HAVE NOTHING TO SAY. bUT TELL ME, WHY DID YOU GIVE CREDIT FOR
mUNIR nIAZIíS LINE TO KABIR?î
ìfiHAT NONSENSE ARE YOU SPOUTING?î i YELLED.
ìfiELL, NOTHING, JUST THAT THE LINE OF VERSE ëaN EMPTY CITY STOOD AWFUL
ALL AROUNDí IS mUNIR nIAZIíS, AND YOU CAN FIND IT ON PAGE 25 IN HIS BOOK OF
POEMS TITLED dUSHMANōñ Kē dARMIYāN sHāM (aN eVENING IN THE mIDST OF
eNEMIES) PUBLISHED IN 1968. ffiOUíVE ATTRIBUTED IT TO KABIR IN 1937. fiHERE
DID YOU SEE IT IN KABIR? ¢OME NOW, ACCEPT THE FACT THAT YOUíVE INSERTED A
STORY IN YOUR AUTOBIOGRAPHY!î
ìaLL STORIES ARE TRUE! aLL STORIES ARE TRUE!î i SCREAMED AFTER A MOMENTíS
SILENCE, AND THEN BEGAN TO SOB UNCONTROLLABLY. 
ótRANSLATION BY mEHR aFSHAN FAROOQI

بہ شکریہ ماہ نامہ اردودنیا نئی دہلی ….شمس الرحمٰن فاروقی — ’’بے درودیوار‘‘ سید احمد شمیم کا تازہ کلام

شمس الرحمن فاروقی
 

’’بے درودیوار‘‘ سید احمد شمیم کا تازہ کلام

   
  سید احمد شمیم کے کمالات شاعری کو دیکھتے ہوئے یہ بات ذرا ناقابل یقین لگتی ہے کہ ان کی اہمیت اور خوبیوں کا وہ اعتراف ابھی تک نہیں ہوا ہے جس کے وہ مستحق ہیں۔ اس کی کم سے کم تین وجہیں سمجھ میں آتی ہیں۔ اول تو نام و نمود کے اسباب وسائل سے ان کی بے نیازی اور ادبی حلقوں میں تعلقات پیدا کرنے، یا انھیں وسیع تر اور عمیق تر کرنے سے اجتناب، رسالوں اور محفلوں میں شرکت سے عام طور پر گریز، یہ باتیں ایسی نہیں جو فی زمانہ کسی کو شہرت یا مقبولیت کے زینے پر بلند کرسکیں۔ دوسری وجہ ان کی ترقی پسندی ہے۔ میں نے ’’ان کی ترقی پسندی‘‘ اس لیے کہا کہ سید احمد شمیم کی ترقی پسندی بھی انھیں کی طرح غیر پنچایتی ہے اور سکہ بند ترقی پسند شاعری کے دائرے میں نہیں آتی۔ ان کے عقائد تو ترقی پسند رہے لیکن شعری طریق عمل میں وہ انفرادیت پسند رہے۔ دنیا کو انھوں نے اجنبی کی آنکھ سے دیکھا، اس اجتماعی آنکھ سے نہیں جو ترقی پسند بوطیقا نے اپنے ہر مقلد کی فطری آنکھ پر عینک کی طرح چڑھا رکھی تھی۔ لہٰذا بااثر ترقی پسند حلقوں میں وہ کم و بیش غیریت کی نگاہ سے دیکھے گئے۔ ترقی پسند زعمامیں سردار جعفری نے ان کی پذیرائی ضرور کی، لیکن دیر میں، اور اتنی پھر بھی نہیں جتنی آؤبھگت کے وہ مستحق تھے۔سیداحمد شمیم کی تخلیقی زندگی کے ان خم و پیچ میں ایک نیا پیچ جدیدیت نے پیدا کیا۔ ان کی علیحدگی پسندی تو جدیدیت کے گوں کا پار تھی، لیکن وہ جدیدیت کے ابہام پرست، داخلیت میں شرابور محاورے کو قبول کرنے سے کتراتے بھی تھے۔ چنانچہ اچھی خاصی ذہنی ہم آہنگی کے باوجود نہ جدیدیت انھیں قبول کرسکی اور نہ ہی انھوں نے جدیدیت کے دروازے پر دستک دی۔ انھوں نے یہ تو دیکھ لیا تھا کہ ادب کے میدان میں ایک نئی ہوا بہہ رہی ہے اور یہ ہوا بہت سی پرانی چھتوں، پناہ گاہوں، اور حتیٰ کہ مزعومات کے بہت سے قلعوں کو اڑا لے جانے کے درپے ہے۔ اگر پرانے حصار ٹوٹے نہیں تو بھی ان میں اتنے شگاف پڑ جائیں گے کہ اب ان میں داخلے کے لیے سیاسی یا سماجی اجارہ داروں کے اجازت نامے کی ضرورت نہ ہوگی۔ لیکن سید احمد شمیم نے جدیدیت کی شعریات کو قبول نہ کرکے وفاداری بشرط استواری کو اصل ایمان قرار دیتے ہوئے بدلتی ہوئی ہوا سے منھ موڑ لیا۔ اس طرح اپنے کلام کی تازگی اور اپنے مزاج کی مفکرانہ انفرادیت کے باوجود سید احمد شمیم ترقی پسندی اور جدیدیت دونوں کے لیے اجنبی ہی رہ گئے۔ستمبر 1970 میں سید احمد شمیم نے شمس فریدی کے ساتھ مل کرنئی شاعری کا ایک انتخاب ’’گلوب‘‘ کے نام سے شائع کیا۔ ایک طرح سے یہ انتخاب ’’نئے نام‘‘، اور سید سجاد کے مرتب کردہ انتخاب ’’نئی نظمیں‘‘ کے جواب میں تھا۔ حسن اتفاق سے ’’نئے نام‘‘ اور ’’نئی نظمیں‘‘ دونوں کی اشاعت 1967 میں عمل میں آئی تھی، اول الذکر کی الہٰ آباد سے اور موخر الذکر کی لاہور سے۔دونوں ہی انتخابات میں ایسی شاعری وافر تھی جسے ادب دوست لوگوں نے پسند کیا اور عام پڑھنے والے کو راحت اور فرحت کا احساس ہوا کہ ان کتابوں کے کسی بھی مصرعے، کسی بھی سطر میں شور، گھن گرج اور نعرہ نہ تھا، اور نہ ہی عمل اور انقلاب اور رجائیت کے بارے میں تعمیمی اور ’’محفوظ‘‘ (یا آج کی زبان میں ’’سیاسی درستی کی حامل‘‘) باتیں تھیں۔ لیکن ان کتابوں کو منفی ردعمل کا بھی سامنا کرنا پڑا۔ کچھ تو انگور کھٹے ہیں والا ردعمل تھا، اور کچھ ردعمل واقعی سرگرانی اور پریشانی اور اس الجھن پر مبنی تھے کہ یہ کس طرح کی شاعری ہے؟ اسے سمجھنے کے طریقے کیا ہیں؟ اس کے مخاطب کون ہیں؟ سید احمد شمیم اور شمس فریدی نے ’’گلوب‘‘ میں ان سوالوں کے جواب دینے کی کوشش تو نہ کی لیکن اپنے دیباچے میں یہ ضرور لکھا: ’’جدید شاعری میں کئی رنگ بیک وقت کارفرما ہیں، لہٰذا اس کی جامع و مانع تعریف ممکن نہیں ہے۔‘‘ یعنی وہ نئی شاعری کی اس تعریف کو رائج کرنے کے حق میں نہ تھے جس کا تقاضا جدیدت کی شعریات میں تھا، لیکن وہ اس بات کو بھی تسلیم کرتے تھے کہ جدید شاعری میں بوقلمونی ہے، اور ترقی پسند محاورہ شاعری کا واحد محاورہ نہیں۔ انھوں نے یہ بھی لکھا کہ اس انتخاب میں ’’کثیف اور بھدے رنگوں‘‘ کی نمائندگی سے گریز کیا گیا ہے، لیکن ’’ن.م.راشد سے لے کر وحیدالحسن تک کی بہترین نظمیں، جو 1960سے لے کر اب تک لکھی گئی ہیں، منتخب ہوجائیں۔‘‘ ظاہر ہے کہ یہ دعویٰ بہت بڑا دعویٰ تھا، اور اس کو عمل میں لانے کی کوئی بھی کوشش تمام پڑھنے والوں کو تو کیا، پڑھنے والوں کی بیش قرار تعداد کو بھی مطمئن نہ کرسکتی تھی۔ یہی سید احمد شمیم اور ’’گلوب‘‘ کا المیہ تھا۔

’’گلوب‘‘ میں ایک طرف تو ایسے شعرا تھے جو کسی ترقی پسند انتخاب میں بار نہ پاسکتے تھے، مثلاً بلراج کومل، جیلانی کامران، ساقی فاروقی، عادل منصوری، عباس اطہر، عمیق حنفی، فہمیدہ ریاض، اور محمد علوی، منیر نیازی وغیرہ، تو بہت سے ایسے شعرا تھے جدید نقاد جنھیں مسترد کرتے تھے، یا اگر مسترد نہ بھی کرتے ہوں تو انھیں ’’اپنوں‘‘ میں شمار کرنے سے قاصر تھے۔ (مثال کے طور پر فیض، مخدوم، منیب الرحمن، اور یوسف ظفر کے نام لیے جاسکتے ہیں۔) پھر یہاں کچھ ایسے بھی لوگ تھے جن کا تشخص نہ جدیدیت کے حوالے سے طے ہوسکتا تھا نہ ترقی پسندی کے حوالے سے، مثلاً حرمت الاکرام، ادیب سہیل، جمیل ملک، کرامت علی کرامت، عرش صدیقی، اور بہت سے دوسرے۔ اس طرح انفرادی مشمولات کی ممکن خوبی کے باوجود ’’گلوب‘‘ میں ایک گومگو کی سی کیفیت تھی اور اس نے معاصر شعر کے منظر میں سید احمد شمیم کے پیکر کو متاثر کیا۔

یہ سب ہوتے ہوئے بھی بات بڑی حد تک اپنی جگہ قائم رہتی ہے کہ سید احمد شمیم کا مقام و مرتبہ آج اکیسویں صدی میں کہاں اور کس طرح متعین کیا جائے؟ اس سوال کا جواب تلاش کرنے کے لیے ان کے مجموعے
’’بے درودیوار‘‘ کی ورق گردانی کریں تو بعض باتیں کچھ ان مل نظر آتی ہیں۔ اس مجموعے کا شاعر سماجی نابرابری اور سیاسی بے انصافی کے خلاف احتجاج کرتا ہے لیکن اس احتجاج میں ایک تھکن ہے، بلکہ یوں کہیں کہ مایوسی ہے، کہ اب کچھ ہو نہیں سکتا:

میں جانتا ہوں…
تو صرف یہ جانتا ہوں
کہ آنے والی صدی کا
بالمیکی
اپنی رامائن لکھے گا
تو یہ ضرور لکھے گا
کہ پچھلی صدی کے
لوگوں نے
رام کو محجوب کیا تا
رام سر جھکائے
حیران کھڑے تھے
راون بھیانک قہقہے لگا رہا تھا۔۔!! (دکھی دل لوگو)

ظاہر ہے کہ احتجاج میں تعمیم اس قدر ہے کہ اسے کسی بھی سیاق و سباق میں درست قرار دے سکتے ہیں، اور اس عمومیت کی بنا پر کلام میں نظم کی جگہ نثر کا انداز آگیا ہے۔ اس نظم کو سردار جعفری بمشکل قبول کرتے، کہ انھوں نے فیض کی نظم ’’صبح آزادی‘‘ کو اس کی عمومیت ہی کی بنا پر مسترد کیا تھا، لیکن اس نظم کو آج کے وہ نقاد بھی قبول کرتے ہوئے شرمائیں گے جو ادب میں ترقی پسندی کو کمیونزم کا مترادف قرار دیتے تھے اور آج اپنا موقف بدلتے بدلتے اس تقاضے تک آگئے ہیں کہ ادب میں کچھ نہ کچھ ’’نظریہ‘‘ ضرور ہونا چاہیے، بلکہ وہ تو ہوتا ہی ہے۔ اس نظم میں کسی نظریے کا وجود ثابت کرنا مشکل ہے۔ دوسری طرف یہی سید احمد شمیم ایسی بھی نظم لکھتے ہیں جس میں ان کی آواز بالکل مختلف سنائی دیتی ہے:

ہوا تیز ہے
بادباں کو نہ کھولو
یہ کشتی یوں ہی تیز
چلتی رہی تو
چٹانوںسے ٹکرا کے
انجام کیا ہو
نہ میں جانتا ہوں
نہ تم جانتی ہو
ہوا تیز ہے
بادباں کو نہ کھولو (بادباں کو نہ کھولو)

یہ نظم جس ہستی سے مخاطب ہوکر کہی گئی ہے وہ ’’مجلسی‘‘ یا ’’عوامی‘’ دونوں ہی دنیاؤں کی مخلوق نہیں، وہ کسی داخلی یا خیالی عالم سے ہے۔ اس کو اپنے وجود کے لیے کسی ’’حقیقی‘‘ حوالے کی ضرورت نہیں۔ متکلم اور اس کے درمیان کا رشتہ استوار ہے بھی اور نہیں بھی ہے۔ ان کے درمیان یہاں جو کچھ ہورہا ہے وہ ان باتوں سے زیادہ اہم ہے جو ہوسکتی تھیں لیکن نہیں ہوئیں، یاجنھیں ہونے سے روکنے کی سعی ہورہی ہے۔ معلوم نہیں یہ سعی کامیاب ہوگی کہ نہیں۔ ناکامیابی کی صورت میں جو روابط بنیں گے وہ شاید ٹوٹ بھی جائیں، لیکن کامیابی کی صورت میں وہ روابط اٹوٹ ہوں گے۔ اسی طرح ایک اور نظم میں روابط کی داستان ہم یوں سنتے ہیں:

اب انھیں چھوڑ کر
تم کہاں جاؤگی؟
پھول
رنگِ شفق
چاندنی
تن بدن میں سمائی ہوئی
گھر کی آسودگی
نرم بستر کی سب
بولتی سلوٹیں
تم جہاں بھی رہوگی
پکڑ لائیں گی
اب انھیں چھوڑ کر
تم کہاں جاؤگی؟؟ (تم کہاں جاؤگی؟)

یہاں خسرو کا شعر یا دآتا ہے

گفتی کہ برو،جاں ببرازمن، چہ روم چوں
ہر جا کہ روم بستہ بہ یک موے تو آیم

لیکن خسر وکے متکلم اور مخاطب دونوں ہی کو شاید ابھی ہوا کی تیزی کا اندازہ نہیں ہے۔ یا شاید بادبانوں کے کھل جانے کے بعد اب وہ کسی ایسی منزل پر ہیں جب آندھی تھم چکی ہے اور مطلوب کی روح کی ناؤ پر طالب کے بدن کا بوجھ بھاری ہوگیا ہے۔ خسرو کے شعر میں عشق کی مابعد الطبیعیات ہے۔ یہاں مطلوب اپنے طالب سے بہت بلند ہوگیا ہے لیکن مرتبۂ مطلوبی سے گرا نہیں ہے، بلکہ اب وہ وہاں ہے جہاں سے افتاد کا امکان ہی نہیں۔ سید احمد شمیم کی نظم میں گھریلو فضاؤں کی خوشبو ہے، لیکن اس خوشبو میں تلخی کا بھی شائبہ ہے۔ یہاں عشق کو روزمرہ زندگی کی طرح جینے کے معاملات ہیں۔ ایک امکان یہ بھی ہے کہ جس ہستی کو اس نظم میں مخاطب کیا گیا ہے وہ گھر چھوڑ کر جاچکی ہے اور متکلم اپنے دل میں یہ باتیں کہہ رہا ہے۔ یعنی یہ نظم تمنا بھری خود کلامی ہوسکتی ہے۔ لیکن نظم کے امکانات یہاں ختم نہیں ہوتے۔یہ بھی ہوسکتا ہے کہ وہ ہستی گھر نہیں بلکہ دنیا ہی چھوڑ چکی ہو اورمتکلم یا تو ہوش و حواس کھو چکا ہے یا خود کو بہلا رہا ہے۔

طالب و مطلوب کے روابط کے یہ گوشے جدیدیت میں نظر نہیں آتے، کیوں کہ جدیدیت کی شاعری بنیادی طور پر غیر عشقیہ شاعری ہے۔ لیکن یہ پیچیدگیاں اور نزاکتیں ترقی پسند شاعری کی بھی دسترس سے کوسوں دور ہیںÛ”

   
 

29 – C, Hastings Road, Allahabad – 211001

….-بہ شکریہ ماہ نامہ اردودنیا نئی دہلی ….شمس الرحمٰن فاروقی……. اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف

شمس الرحمٰن فاروقی

اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف

سوال : دار اور وار کے استعمال کی وضاحت کیجیے،مثلاً نمبردار،ٹھیکیدار، دلدار،سلسلہ وار،نمبر وار آئیے، دل وار دیا؟
جواب: آپ نے تین طرح کے لفظوں کے بارے میں الگ الگ سوال کرنے کے بجائے ایک ہی سوال کردیا۔ بہر حال، جواب ملاحظہ ہون”نمبردار“،”دلدار“ وغیرہ میں ”دار “ اسم فاعل ہے، اس کا مصدر ”داشتن“ ہے، بمعنی”رکھنا“۔ لہٰذا یہاں ”دار“ کے معنی ہیں،”رکھنے والا۔“ لہٰذا ”نمبردار“ وہ شخص ہوا جو کسی جگہ (عام طور پر گاﺅں میں) کوئی ”نمبر“ (بمعنی ’درجہ، عہدہ“) رکھتا ہو۔ ان معنی میں ”لمبردار“ بھی صحیح ہے۔ ”دلدار“ کے معنی ہوئے ”وہ شخص جو دل ]اپنے پاس[رکھتا ہو، یعنی معشوق، یا مہربان دوست“۔ اسی پر اور لفظوں کو قیاس کر لیجیے۔و”وار“ در اصل ”بار“ ہے، یعنی ”باری، کسی چیز یا بات کے واقع ہونے کا صحیح موقع“۔ لہٰذا ”نمبروار“ کے معنی ہوئے”اپنے نمبر سے، اپنی باری پر“ اور ”سلسلہ وار“ کے معنی ہوئے ”ایک سلسلے میں ، یعنی تسلسل سے، ایک کے بعد ایک۔“ ”وارنا“ اردو مصدر ہے، بمعنی ”داﺅ پر لگانا، ہار جانا“، وغیرہ ۔ اب ”دل وار دیا“ کے معنی خود بخود ظاہر ہو گئے۔
سوال: محراب کے معنی اور مصدر بتائیے؟
جواب: ”محراب“عربی لفظ ہے، اس کا مادہ ح۔ر۔ب۔ ہے، جس کے معنی ہیں ”جنگ“۔ اس طرح ”محراب“ کے معنی ہوئے آ”آلہ جنگ“ یعنی ہتھیار وغیرہ۔اردو میں اس کے معنی حسب ذیل ہیں: (1)کمان یا نیم دائرہ جیسی تعمیری شکل جس پر دیوار اور پھر چھت کو قائم کرتے ہیں۔ ان معنی میں اردو کا زیادہ مقبول لفظ ”ڈاٹ“ ہے۔(2)مسجد کا وہ حصہ جہاں امام نماز پڑھانے کے لیے کھڑا ہوتا ہے۔ کہا گیا ہے کہ وہ جگہ شیطان کے خلاف ایک ہتھیار ہے، لہٰذا اسے ”محراب“ کہتے ہیں۔(3) کسی عمارت کا صدر دروازہ۔ یہ آخری معنی اردو میں شاذ ہیں۔میں بار بار عرض کر چکا ہوں کہ سوالات اردو زبان کے متعلق ہو ں اور ایک وقت میں تین سے زیادہ سوال نہ پوچھے جائیں۔ لیکن جب سوالات آ جاتے ہیں تو جواب نہ دینا کج خلقی معلوم ہوتی ہے۔ سوال کنندہ صاحبان براہ کرم خیال رکھیں کہ اس کالم کا عنوان ”اچھی اردو: روز مرہ، محاورہ، صرف“ ہے۔

(سوالات از واجد حسین صدیقی، علی گڑھ)

سوال: رسالہ اور جریدہ میں کیا فرق ہے؟
جواب: آج کل یہ دونوں لفظ اس اعتبار سے ہم معنی ہیں کہ دونوں سے ہم ایسا اخبار یا کتاب مراد لیتے ہیں جس میں مختلف اصناف پر مبنی تحریریں ہوں اور جو کسی مقررہ وقفے سے نکلتا ہو۔ ”جریدہ“ اب ذرا کم سنائی دیتا ہے۔ ”رسالہ“ کے اور بھی معنی ہیں، مثلاً (1)فوجیوں کا دستہ، (2) کوئی مختصر کتاب جو ایک ہی موضوع پر ہو۔ ”جریدہ“ کے اصل معنی ”تنہا“ ہیں۔ چونکہ رسالہ یا اخبار کا بھی ایک ایک شمارہ مقررہ وقت پر نکلتا ہے اس لیے ”رسالہ، اخبار“ کے معنی بھی پیدا ہو گئے۔ ”جریدہ“ بمعنی ”تنہا“ اب بہت کم سننے میں آتا ہے۔”صفحہ“ کے معنی میں، اور ”فوجی دستہ“ کے معنی میں بھی ”جریدہ“ پہلے بولا جاتا تھا۔ اب ”جریدہ ¿ عالم“ کی ترکیب (غالباً حافظ کے ایک شعر کی وجہ سے) ہی مستعمل نظر آتی ہے۔ اکیلے ”جریدہ“ بمعنی ”صفحہ“ شاذ ہے، اور بمعنی ”فوجہ دستہ“ بالکل مستعمل نہیں۔
سوال: الف اور ہمزہ کیا دونوں ایک ہی ہیں؟
جواب: اردو کے لیے الف اور ہمزہ الگ الگ حرف ہیں۔ اکثر اوقات (خاص کر وسط لفظ میں)ہمزہ وہی کام کرتا ہے جو ہم الف سے بھی لے سکتے تھے، (مثلاً لائیے، سئیس، وغیرہ کو لا ایے اور س ایس لکھ سکتے ہیں)۔لیکن اردو نے الف کی جگہ ہمزہ اختیار کیا کیونکہ اس میں بہت سے فائدے ہیں۔ عربی میں ہمزہ اور الف ایک ہی چیز ہیں۔ عربی میں الف کو ہمیشہ ساکن فرض کرتے ہیں اور عربی میں ابتدا بسکون محال ہے، لہٰذا جن الفاظ کے شروع میں الف ہے ان میں الف کو ہمزہ فرض کر لیتے ہیں اور کبھی کبھی الف پر ہمزہ لکھ بھی دیتے ہیں۔ عربی کے جن الفاظ میں وسط لفظ میں ہمزہ ہے، مثلاً ”جرا ¿ت“، ان میں بھی عربی والے الف کو بے وجود مانتے ہیں اور صرف ہمزہ پڑھتے ہیں۔ واضح رہے کہ ان سب باریکیوں کے باوجود عربی میں ہمزہ کوئی حرف نہیں، حرف تو الف ہی ہے۔ جب الف متحرک ہو جائے تو عربی والے اسے ہمزہ کہتے ہیں۔
سوال: جز و لا ینفک کا صحیح تلفظ کیا ہے؟
جواب: ج پر پیش، ز ساکن، و پرزیر، لا، ی پر زبر، ن ساکن، ف پر زبر، ک ساکن۔ گویا ”جزو“ کا تلفظ وہی ہے جو ”جرم“ کا ہے۔یہاں واﺅ پر زیر پڑھیں گے۔ ”لاینفک“ کا تلفظ وہی ہے جو ”لاینحل“ کا ہے۔

(سوالات ازرفعت جمیل انصاری، کتراس گڑھ،جھارکھنڈ)

سوال: ”لغت“مذکر اور ”ڈکشنری“ مونث کیوں ہے، جب کہ دونوں چیزیں ایک ہی ہیں؟
جواب: ”ڈکشنری“کے معنی میں بہت سے لوگ ”لغت“کو مونث کہتے ہیں۔ صرف ”لفظ“ کے معنی میں ”لغت“ متفقہ طور پر مذکر ہے۔ ”ڈکشنری“ کو مونث کہنے کی ایک وجہ یہ ہے کہ اس کے آخر میں چھوٹی ی ہے، اور اردو میں چھوٹی ی پر ختم ہونے والے الفاظ زیادہ تر مونث ہیں۔ دوسری وجہ یہ کہ جب ”لغت“ کو مونث بھی بولا جاتا ہے تو اسی بنا پر ”ڈکشنری“ کو بھی مونث بنا لیا گیا۔ تیسری بات یہ کہ ”ڈکشنری“ کا مرادف ایک اردو لفظ ”فرہنگ“ بھی ہے جو متفقہ طور پر مونث ہے۔ لہٰذا ڈکشنری کو بھی مونث مان لیا گیا۔
سوال: ”گزشتہ“ صحیح ہے یا ”گذشتہ“؟
جواب: اب دونوں ہی کو صحیح مان لینا چاہیے کیونکہ دونوں املا یکساں مستعمل ہیں۔ ویسے ،میرا ذاتی خیال یہ ہے کہ ”گزشتہ“ مع ز کو جن اسباب کی بنا پر درست سمجھ لیا گیا ہے وہ غلط ہیں اور میں ”گذشتہ“ میں ذ کو ترجیح دیتا ہوں۔ لیکن رواج عام دونوں کو صحیح کہتا ہے۔
سوال: ”سحرالبیان“کہنا چاہیے یا ”سیحر البیان؟،اسی طرح، ”محمد“ یا ”موحمد“؟
جواب: آپ کا سوال سمجھ میں نہیں آیا۔آپ نے جو املے لکھے ہیں وہ ہندی میں رائج ہوں تو ہوں، اردو میں تو س”سحرالبیان“اور ”محمد“ ہی لکھا جائے گا۔ ہندی میں ”سحر البیان“کو صحیح لکھنا غیر ممکن ہے۔ یا تو پہلے حرف کو چھوٹی ای کی ماترادے کر لکھیے، یا اے کی ماترا دے کر لکھیے، دونوں ہی غلط ہوں گے۔ رہا سوال ”محمد“ کا، تو ہندی میں حرف اول کو چھوٹے او کی ماترا کے ساتھ لکھ سکتے ہیں اور ایسا ہی لکھنا بھی چاہیے۔

(سوالات از سنجے کمار، شعبہ اردو، الٰہ آباد یونیورسٹی)

29-C, Hastings Road, Civil Lines, Allahabad – 211001

احمد محفوظ …..اردو کا شاہکار ناول — کئی چاند تھے سر آسماں….بہ شکریہ ماہ نامہ اردودنیا نئی دہلی

احمد محفوظ

اردو کا شاہکار ناول — کئی چاند تھے سر آسماں

اردو کے معروف ادیب اسلم فرخی نے اپنے ایک مکتوب مورخہ19 ستمبر 2006مطبوعہ خبرنامہ شب خون نمبر2میں لکھا ہےککئی چاند تھے سر آسماںنے مقبولیت کے سارے ریکارڈ توڑدیے۔ میرے ہمسائے میں ایک ایسے صاحب رہتے ہیں جو مالیات کے بڑے ماہر ہیں اور بڑے مصروف انسان ہیں مگر میں نے یہ دیکھا کہ انھوں نے ”کئی چاند تھے سر آسماں“کے ابتدائی بیس صفحے پڑھنے کے بعد اس کتاب کو اس طرح پڑھا کہ ہر چیز سے بے نیاز و بیگانہ ہو گئے۔ ایک اور صاحب نے جو ہمارے ملک کے بڑے سائنس داں ہیں مجھ سے یہ کہا کہ میری بیوی نے مجھے اس کتاب میں غرق دیکھ کر یہ پوچھا کہ آج تک تم نے کوئی کتاب اس انہماک سے نہیں پڑھی،اب تمھیں کیا ہو گیا ہے؟ حقیقت یہ ہے کہ جو شخص بھی اس کتاب کے کچھ صفحے پڑھ لیتا ہے وہ پھر دنیا و ما فیہا سے غافل ہو کر اس کے مطالعے میں غرق ہو جاتا ہے۔ میرا خیال ہے کہ ”کئی چاند تھے سر آسماں“ اکیسویں صدی ہی کی نہیں، اردو فکشن کی بہترین کتاب ہے۔شمس الرحمن فاروقی کے ناول ”کئی چاند تھے سر آسماں“ کے بارے میں اوپر جن خیالات کا اظہار کیا گیا ہے وہ کسی مبالغے پر مبنی نہیں ہیں بلکہ حقیقی صورت حال کی عکاسی کرتے ہیں۔ اس ناول کی مقبولیت کی اور بھی مثالیں دیکھی جا سکتی ہیں۔ ان میں سے کچھ کا ذکر آگے آئے گا۔

اس ناول پر گفتگو کرتے ہوئے ہمیں اس امر کو بھی پیش نظر رکھنا چاہیے کہ یہ غیر معمولی تخلیقی کارنامہ یوں ہی اچانک وجود میں نہیں آ گیا، بلکہ اس کے پیچھے وہ مقاصد اور منصوبے کار فرما رہے ہیں جن کا اظہار شمس الرحمن فاروقی کی دیگر تصانیف میں وقتاً فوقتاً ہوتا رہا ہے۔ چنانچہ ابھی کچھ برس پہلے ان کے افسانوں کا پہلا مجموعہ ”سوار اور دوسرے افسانے“منظر عام پر آیا تو اس کی بھی غیر معمولی شہرت اور پذیرائی ہوئی، ساتھہی ادبی دنیا میں اس بات کا چرچا بھی دیر تک ہوتار ہا کہ ان افسانوں کی تعمیر جن بنیادوں پر ہوئی ہے اور اس کا جو نقشہ سامنے آیا ہے، اس کی کوئی مثال اس سے پہلے دیکھنے کو نہیں ملتی۔یہ تو ہم جانتے ہی ہیں کہ ان افسانوں میں اردو کے مشاہیر شعرا مثلاً میر تقی میر، مرزا غالب اور غلام ہمدانی مصحفی وغیرہ کو مرکز میں رکھ کر اٹھارھویں اور انیسویں صدی کے ہندوستان کی ادبی اور تہذیبی صورت حال کو ایسی غیر معمولی مہارت اور ہنر مندی کے ساتھ پیش کیا گیا ہے کہ اس عہد کے ادبی و تہذیبی مراکز بالخصوص دہلی پوری آب و تاب کے ساتھ ہمارے سامنے متشکل ہو جاتی ہے۔ ہم شدت سے محسوس کرنے لگتے ہیں کہ آج کا عہد جس ادبی روایت کا امین اور پاسدار ہے، اس کی حقیقی شکل و صورت کتنی دلکش اور تابناک تھی۔ کیونکہ اس سے پہلے اس شکل و صورت کا جو بھی احساس تھا وہ نہایت دھندلا اور اس قدر غیر واضح تھا کہ کچھ بھی صاف سمجھ میںنہ آتا تھا۔ لہٰذا اپنی روایت کے بارے میں اب تک ہمارے جو بھی احساسات تھے وہ نادیدہ یا کم دیدہ نقوش ہی کے مرہون منت تھے۔

یہاں بر سبیل تذکرہ اس بات کی طرف اشارہ ضروری معلوم ہوتا ہے کہ اپنی تہذیب اور ادب کے بارے میں منفی اور گمراہ کن خیالات و رجحانات کے پھیلنے یا پھیلائے جانے کا کام انیسویں صدی کے اواخر اور اس کے بعد اتنی تیزی کے ساتھ انجام پذیر ہوا کہ تھوڑے ہی عرصے میں ہماری قدیم ادبی و تہذیبی روایت پر خط تنسیخ کھینچ دیا گیا اور اس طرح وہ تہذیبی انقطاع عمل میں آیا جس کے دور رس نتائج سے ہم اتنے عرصے بعد آج بھی دو چار ہیں۔ شروع ہی میں نہیں بلکہ بیسویں صدی کے ایک طویل عرصے تک اس انقطاع کو اچھی طرح محسوس نہیں کیا گیا، اور اگر کہیں کچھ احساس ہوا بھی تو اس پر صرف رنج و افسوس کر لینا ہی کافی سمجھا گیا۔ اس سلسلے میں شمس الرحمن فاروقی کو یہ امتیاز حاصل ہے کہ وہ تنہا شخص ہیں جنھوں نے اس ادبی و تہذیبی انقطاع کو نہ صرف شدت سے محسوس کیا بلکہ اس کے اسباب و عوامل اور مضمرات پر پہلی بار نہایت شرح و بسط کے ساتھ کلام کیا۔ یہی نہیں، انھوں نے اپنی تحریروں کے ذریعے اس انقطاع کے اثرات کو ختم کر کے اپنی قدیم ادبی و تہذیبی روایت سے رشتہ قائم اور مستحکم کرنے کی کامیاب کوشش کی ہے۔ چنانچہ کلاسیکی تہذیب اور شعریات کے حوالے سے خدائے سخن میر تقی میر پر عہد ساز کتاب ”شعر شور انگیز“ ہو یا مذکورہ افسانے ہوں، سب اسی سلسلے کی کڑیاں ہیں۔

اب جب کہ یہ ناول ”کئی چاند تھے سر آسماں“اشاعت پذیر ہوا ہے تو اسے بھی شمس الرحمن فاروقی کے اس بڑے منصوبے کا اہم حصہ سمجھنا چاہیے، جس کے تحت وہ پچھلے کئی برسوں سے اپنی قدیم روایت کی بازیافت کا کام انجام دے رہے ہیں۔ایک معنی میں دیکھا جائے تو فاروقی کے مذکورہ بالا افسانوں کو اس ناول کی تمہید یا نقش اول بھی کہا جا سکتا ہے۔کیونکہ موضوع، طرز بیان اور زبان کی نوعیت کے اعتبار سے ان افسانوں اور ناول میں بڑی یکسانیت نظر آتی ہے۔ البتہ افسانوں میں اختصار کے سبب جو کچھ، محض اشاروں میں اجمال کے ساتھ بیان ہوا ہے، اسے ناول میں بہت پھیلا کر جزئیات کی پوری تفصیل کے ساتھ پیش کیا گیا ہے۔ یہاں اس بات سے یہ گمان نہ ہونا چاہیے کہ یہ ناول ان افسانوں کا تفصیلی بیان محض ہے۔ اسے مصنف کی تخلیقی ہنر مندی اور فنی مہارت کا واضح ثبوت ہی کہا جائے گا کہ اپنے وسیع معنوں میں موضوع اور زبان و بیان کی یکسانیت کے باوجود یہ ناول افسانوں سے نہ صرف مختلف تاثر پیش کرتا ہے بلکہ ہمیں یکسانیت کے احساس سے باز بھی رکھتا ہے۔اس میں صنفی اختلاف کے ساتھ ساتھ اس بات کو بھی دخل ہے کہ افسانوں کے بر خلاف ناول کے مرکز میں مصنف نے جس کردار کو قائم کیا ہے، وہ کسی مشہور اور بڑے کلاسیکی شاعر کا کردار نہیں،بلکہ ہماری تہذیبی تاریخ کی ایسی شخصیت ہے جسے دنیا وزیر خانم عرف چھوٹی بیگم کے نام سے جانتی ہے۔ انھیں وزیر خانم کو نواب مرزا داغ دہلوی کی ماں ہونے کا شرف حاصل ہے۔ داغ دہلوی کو جس قدر شہرت اور مقبولیت حاصل ہوئی، اس کے سامنے دیکھا جائے تو وزیر خانم گمنام خاتون ہی کہی جائیں گی۔یہ حقیقت بھی ہے کیونکہ وزیر خانم کے بارے میں ہماری ادبی تاریخ عام طور سے خاموش رہی ہے۔ اب اس نوال میں اٹھیں مرکزی کردار کی حیثیت سے جس طرح پیش کیا گیا ہے اور حقائق و واقعات کی جو تفصیلات بیان ہوئی ہیں،وہ تاریخی طور پر خواہ پوری طرح مصدقہ نہ ہوں لیکن ان سے وزیر خانم کی زندگی اور شخصیت کے بارے میں بہت کچھ اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔اسی کے ساتھ وزیر خانم کی شخصیت کی روشنی میں اس عہد کے ذہن اور مزاج و مذاق کو بھی سمجھنے میں مدد مل سکتی ہے۔

کتابی صورت میں اشاعت سے پہلے اس ناول کے کچھ حصے رسائل میں بھی شائع ہوئے۔ رسائل میں ان حصوں کا چھپنا تھا کہ ہر طرف سے ناول کے بارے میں تحسین آمیز بیانات آنے شروع ہو گئے۔ان مطبوعہ حصوں سے لوگوں کو اتنا اندازہ تو ہو ہی گیا تھا کہ مکمل صورت میں ناول کے خدوخال کیا ہوں گے۔ چنانچہ تعریف و تحسین کے ساتھ کچھ ایسے خیالات بھی سامنے آئے جن سے یہ تاثر ملتا تھا کہ ناول اگرچہ غیر معمولی خوبیوں کا حامل ہے اور اپنی مثال آپ ہے لیکن یہ جس عہد کی تاریخ اور تہذیب کے بارے میں کلام کرتا ہے، وہ اب ہمارے لیے کسی خاص اہمیت کا حامل نہیں ہے۔ پھر یہ بھی کہ اس ناول میں جس طرح کی زبان استعمال ہوئی ہے، اب وہ متداول نہیں، اس لیے بڑی حد تک مشکل اور نا قابل فہم ٹھہرے گی۔یہاں اگر ہم غور کریں تو پہلی بات جو کہی گئی ہے، اس کی تہ میں اس تہذیبی انقطاع کے اثرات کو بخوبی دیکھ سکتے ہیں جس کا ذکر شروع میں کیا گیا ہے۔ اور زبان کے بارے میں جو بات کہی گئی ہے وہ ہمارے زمانے کے سہل پسند مزاج کی آئینہ داری کرتی ہوئی معلوم ہوتی ہے۔

بہر حال یہ دونوں باتیں چونکہ حقیقت سے بہت دور تھیں، اس لیے ہم نے دیکھا کہ عملاً غلط ثابت ہوئیں۔آپ کہیں گے اس کا ثبوت کیا ہے؟ تو جواب میں اس مضمون کے آغاز میں منقولہ اقتباس ہی شاید کافی ہو، کیونکہ اس میں دونوں باتوں کا جواب موجود ہے۔لیکن مزید عرض ہے کہ اس ناول کا پہلا ایڈیشن جو پاکستان سے شائع ہوا، اس کی شہرت اور مقبولیت کا شور ابھی پوری طرح تھما بھی نہیں تھا کہ مشہور انگریزی پبلشر پینگوئن بکس نے اس کا ہندوستانی اردو ایڈیشن شائع کر دیا۔اتنے کم عرصے میں کسی اردو ناول کا نیا ایڈیشن منظر عام پر آنا، اس بات کی روشن دلیل نہیں تو اور کیا ہے کہ ناول بالکل نئے طرح کے موضوع اور خاص نوعیت کے زبان و بیان کا حامل ہونے کے باوجود اہل ذوق کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے۔

جہاں تک ایک خاص عہد کی تاریخ و تہذیب کو موضوع بنانے کا معاملہ ہے تو ہمیں یہ بات نہیں بھولنی چاہیے کہ وہ عہد ہمارے شعور و احساس کے کسی ان دیکھے گوشے میں اب بھی موجود ہے۔ ہم اپنے تہذیبی ماضی سے آج بھی اسی طرح وابستہ ہیں جس طرح ہمارے اسلاف اپنے تہذیبی ماضی سے جڑے ہوئے تھے۔ یہ ایسا تسلسل ہے جو ہر عہد میں قائم رہتا ہے، خواہ خارجی سطح پر صورت حال کتنی ہی مختلف کیوں نہ ہو جائے۔ آخر کیا وجہ ہے کہ سوا سو برس گزر جانے کے بعد بھی ” آب حیات“کی شہرت، مقبولیت اور ادبی اہمیت میں ذرہ برابرکمی نہیں آئی ہے۔ محمد حسین آزاد نے اس کتاب میں ہمارے ادبی و تہذیبی ماضی کی جو تصویر کشی کی ہے وہ اس قدر زندہ اور متحرک ہے کہ ہم جب بھی اس پر نگاہ ڈالتے ہیں تو خود کو ایک نئی دنیا میں پاتے ہیں۔ اس لحاظ سے اگر دیکھا جائے تو ”کئی چاند تھے سر آسماں“ کو ایک معنی میں ”جدید آب حیات“ بھی کہا جا سکتا ہے۔

یہ بات تو مبنی بر حقیقت ہے کہ اس ناول کی زبان آج کی زبان نہیں ہے، بلکہ اسے ماضی قریب کی زبان بھی نہیں کہہ سکتے۔اس اعتبار سے ناول میں مستعمل زبان کا وافر حصہ موجود ہ قاری کے لیے نامانوس ضرور ہے۔ لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ نا مانوس زبان کا یہ استعمال ناول کی خامی یا نا کامی پر محمول نہیں ہو سکتا بلکہ اسے ناول کا تقاضا اور اس طرح اس کی بہت بڑی قوت کہنا زیادہ مناسب ہوگا۔اس کا بنیادی سبب یہ ہے کہ مصنف نے ناول میں بیانیہ کی جو حکمت عملی اختیار کی ہے، اس کی رو سے زبان کا بڑا حصہ وہ ہو ہی نہیں سکتا جسے ہم آج استعمال کرتے ہیں۔یہاں بیانیہ کو اس طرح بروئے کار لایا گیا ہے کہ پورا ناول ایک سے زیادہ راویوں کے ذریعے بیان ہوا ہے۔

جیسا کہ شروع میں عرض کیا گیا، ناول کا بڑا حصہ وزیر خانم کے کردار کے گرد گھومتا ہے۔ وزیر خانم کے والد محمد یوسف سادہ کار ناول کے پانچویں باب بعنوان ”تصویر“ کے آغاز سے بطور حاضر راوی ہمارے سامنے آتے ہیں۔ یہ سنہ عیسوی1840ہے اور اس وقت ان کی عمر 47 سال ہے۔ یہاں سے یوسف سادہ کار کا بیان ناول کے بیسویں باب تک جاری رہتا ہے، جب وزیر خانمAssistant Political Agentمارسٹن بلیک سے منسلک ہو کر جے پور چلی جاتی ہیں اس کے بعد کے واقعات غائب راوی کے ذریعے بیان ہوئے ہیں۔ بطور حاضرراوی یوسف سادہ کار اپنی سب سے چھوٹی بیٹی وزیر خانم کے ذکر سے پہلے اپنے خاندان اور اجداد کا حال بھی نہایت تفصیل کے ساتھ بیان کرتے ہیں۔ یہ تفصیلات نہایت دلچسپ اور حد درجہ لائق توجہ ہیں۔ان کے بیان میں مصنف کی تخلیقی مہارت کا جو اظہار ہوا ہے، وہ قابل داد ہے۔ یوسف سادہ کار کی خاندانی تفصیلات کے بیان کا جواز بھی ناول کے اندر رکھ دیا گیا ہے۔ یوسف سادہ کار کا بیان جہاں سے شروع ہوتا ہے، وہاں کی چند سطریں ملاحظہ ہوں

”میرا نام محمد یوسف سادہ کار ہے۔ میں کشمیر ی الاصل ہوں۔ لیکن اصل معاملہ میرا اتنا سادہ نہیں، اور شروع سے بیان کروں تو بہت لمبا اور پیچ در پیچ ہے۔ لیکن شروع سے بیان نہ کروں تو اس کی باریکیاںکسی کی سمجھ میں نہ آئیں گی۔

ظاہر ہے اس بیان سے ان تفصیلات کا جواز فراہم ہوجاتا ہے جو محمد یوسف سادہ کار کی زبانی ناول میں مذکور ہوئی ہیں۔ چونکہ یہ زمانہ وسط انیسویں صدی کا ہے اور جیسا کہ ہم دیکھ رہے ہیں راوی بھی اسی زمانے کا ہے، لہٰذا یہ لازمی تھا کہ اس کے ذریعے جو کچھ بیان ہو، وہ اسی عہد کی زبان میں ہو۔اس طرح ہم کہہ سکتے ہیں کہ ناول کا تقاضا ہی یہ تھا کہ اس میں زبان وہ استعمال ہو جو آج نہیں بلکہ انیسویں صدی میں یا اس سے پہلے مستعمل تھی۔ اس عہد کے ہندوستان بالخصوص دہلی کی ادبی و تہذیبی فضا پر زبان و بیان کا جو رنگ چھایا ہوا تھا اسے ہم آج اس ناول کے ذریعے اچھی طرح دیکھ سکتے ہیں۔

ناول کے ابتدائی چار ابواب کا بیانیہ بھی خاص طور سے توجہ کے لائق ہے۔در اصل ان ابواب میں وزیر خانم اور مارسٹن بلیک اور ان سے متولد اولادوں اور ان کے اخلاف کا بیان ہے۔مارسٹن بلیک اور وزیر خانم سے دو اولادیں ہوئیں، ایک بیٹی سوفیہ عرف بادشاہ بیگم اور ایک بیٹا مارٹن بلیک عرف امیر مرزا۔ مارسٹن بلیک کی موت کے بعد وزیر خانم اپنی ان اولادوں سے محروم ہو گئیں اور یہ دونوں بچے مارسٹن بلیک ہی کے خاندان میں پلے بڑھے۔پھر انگلستان جا کر وہیں کے ہو کر رہ گئے۔ ان ابواب میں ان کی اولادوں کا بھی ذکر آیا ہے۔ ناول کے ایک کردار وسیم جعفر انھیں اولادوں میں سے ایک ہیں۔ ان تفصیلات کا بیان بھی حاضرراوی کے ذریعے ہوا ہے۔ لیکن یہاں حاضر راوی کوئی حقیقی کردار نہیں بلکہ ایک فرضی کردار کی صورت میں ہمارے سامنے آتا ہے۔ مصنف نے اس فرضی کردار کی تشکیل بڑے دلچسپ انداز میں کی ہے۔چنانچہ ناول کے پہلے باب بعنوان ”وزیر خانم“کے آغاز سے پہلے قوسین میں لکھا گیا ہے ”ڈاکٹر خلیل اصغر فاروقی، ماہر امراض چشم کی یادداشتوں سے ۔“یہی فقرہ دوسرے اور تیسرے باب کے آغاز میں بھی درج ہے اور چوتھے باب کے شروع میں ”ڈاکٹر وسیم جعفر کی تحریرات پر مبنی“لکھا ہوا ہے۔ ان ابواب میں بیان کردہ تفصیلات چونکہ تاریخی طور پر پوری طرح مصدقہ نہیں ہیں،اس لیے حاضرراوی کو بروے کار لاتے ہوئے بھی اسے فرضی کردار کی صورت میں پیش کیا گیا ہے۔ ڈاکٹر وسیم جعفر کا کردار اس معنی میں حقیقی ہے کہ ان کا تعلق وزیر خانم کی اولادوں امیر مرزا اور بادشاہ بیگم کے خاندان سے ہے۔ البتہ ڈاکٹر خلیل اصغر فاروقی سے موسوم حاضرراوی قطعاًفرضی ہے۔ اس راوی کی تشکیل میں مصنف نے جدت طبع کا ثبوت فراہم کیا ہے۔ راوی کے فرضی نام میں بھی ایک دلچسپ پہلو پنہاں ہے۔شمس الرحمن فاروقی کے والد کا نام مولوی محمد خلیل الرحمن فاروقی اور دادا کا نام حکیم مولوی محمد اصغر فاروقی ہے۔ اس طرح مصنف نے اپنے والد اور جد بزرگوار کے ناموں کو ملا کر فرضی نام کی تشکیل اس خوبصورتی سے کی ہے کہ یہ نام فرضی معلوم ہی نہیں ہوتا۔

چونکہ ان ابواب کے آغاز میں ہی کہہ دیا گیا ہے کہ آگے جو کچھ بیان ہوگا اس کی بنیاد محض یاد داشتوں پر ہے، لہٰذا اس کے معنی یہی ہیں کہ اگریہاں کوئی بات، کوئی واقعہ، کوئی تفصیل مبنی بر حقیقت نہ ٹھہرے یا تاریخی اعتبار سے غلط قرار پائے تو اس میں کوئی قباحت نہ ہوگی یا اسے قابل گرفت نہ سمجھا جائے ۔ کیونکہ اصلاً اور اولاً یہ سارا بیان ہے تو ناول کا حصہ، کسی تاریخ کی کتاب کا جزو نہیں۔ علاوہ ازیں پہلے باب کا اولین اقتباس ہی ان باتوں کی طرف اشارہ کر دیتا ہے۔

”وزیر خانم عرف چھوٹی بیگم (پیدائش غالباً1811)محمد یوسف سادہ کار کی تیسری اور سب سے چھوٹی بیٹی تھیں۔ ان کی پیدائش دہلی میں ہوئی۔ لیکن محمد یوسف سادہ کار دہلوی الاصل نہ تھے، کشمیری تھے۔ یہ لوگ دہلی کب اور کیونکر پہنچے، اور دہلی میں ان پر کیا گزری، یہ داستان لمبی ہے۔اس کی تفصیلات پہلے بھی کچھ بہت واضح نہ تھیں، اور اب تو تمادی ایام کے باعث اور کچھ دوسری مصلحتوں کے باعث شاید بالکل بھلا دی گئی ہیں۔ جو کچھ معلوم ہو سکا ہے، وہ حسب ذیل ہے، لیکن ضروری نہیں کہ یہ سب تاریخی طور پر بالکل درست ہو۔“
اس اقتباس کا آخری فقرہ نہایت اہم اور معنی خیز ہے۔ یعنی یہ اس بات کا واضح اشارہ اور اعلان ہے کہ آگے جو بھی واقعات بیان ہوں گے وہ اگرچہ غیر تاریخی تو نہ ہوں گے لیکن وہ سب ایسے بھی نہ ہوںگے جنھیں تاریخی طور پر بالکل درست سمجھا جانا ضروری ہو۔اس بیان سے اس بات کا جوازمزید مستحکم ہو جاتا ہے کہ یہ کتاب تاریخ نہیں بلکہ فکشن ہے۔

میں یہ بات زور دے کر کہنا چاہتا ہوں کہ اس ناول کی سب سے بڑی خوبی اور قوت اس کے زبان و بیان اور جزئیات نگاری میں پوشیدہ ہے۔ ایک خاص عہد کی زبان کو دوبارہ زندہ کر کے اس طرح استعمال کرنا کہ واقعات بھی پوری طرح متشکل ہو جائیں اور بیانیہ کے اصول بھی مجروح نہ ہوں، نہایت مشکل اور صبر آزما کام ہے۔ پھر یہ بھی کہ اس زبان کے روز مرہ اور محاورے کی خلاف ورزی بھی نہ ہونے پائے اور آداب گفتگو وغیرہ کے تمام لوازم کا پورا پورا پاس و لحاظ بھی قائم رہے۔ ان تمام باتوں کے لیے مطالعہ و مشاہدہ اور مشق و مزاولت کی جس منزل تک رسائی درکار ہوتی ہے، فاروقی صاحب نہ صرف وہاں تک پہنچے ہیں بلکہ اس پر ان کا بھرپور تصرف بھی دیکھا جا سکتا ہے۔ ناول میں مستعمل زبان کے سلسلے میں انھوں نے کتاب کے آخر میں خود لکھا ہے کہ ”میں نے اس بات کا خاص خیال رکھا ہے کہ مکالموں میں،اور اگر بیانیہ کسی قدیم کردار کی زبانی، یا کسی قدیم کردار کے نقطہ ¿ نظر سے بیان کیا جا رہا ہے تو بیانیہ میں بھی، کوئی ایسا لفظ نہ آنے پائے جو اس زمانے میں مستعمل نہ تھا۔“ اس کے بعد وہ اعتراف کرتے ہوئے یہ بھی کہتے ہیں ”ظاہر ہے کہ یہ بات لغات کی مددکے بغیر ممکن نہ تھی۔“در اصل یہ بیان اعتراف سے زیادہ انکسار مزاج کا اظہار معلوم ہوتا ہے۔لغات کی کتابیں تو ہمیشہ سب کے لیے موجود ہوتی ہیں لیکن ان میں مندرج الفاظ کے خزانے کو کامیابی کے ساتھ وہی صرف میں لاتا ہے، جس کے مزاج کو اس سے مناسبت ہوتی ہے۔ اردو فارسی کی قدیم کلاسیکی روایت اور تہذیب سے فاروقی صاحب کے مزاج کی مناسبت اظہر من الشمس ہے۔ اس کا اظہار ان کی تحریر و تقریر سے عموماً ہوتا رہتا ہے۔ لہٰذا یہ کہنا زیادہ مناسب ہوگا کہ انھوں نے ایک خاص عہد میں مروج الفاظ و محاورات کی تلاش و تفحص میں لغات سے مدد ضرور لی ہے لیکن انھیں بیانیہ کا جزوبنانے کا اہم ترین اور مشکل ترین مرحلہ ان کی افتاد طبع اور غیر معمولی قوت بیان ہی کے ذریعے سر ہوا ہے۔ قدیم عہد میں الفاظ کے مخصوص معنوں میں استعمال کی ایک مثال یہاں دلچسپی سے خالی نہ ہوگی۔ وزیر خانم، نواب شمس الدین احمد خاں کے دولت کدے پر پہلی بار تشریف لاتی ہیں اور خواتین کے لیے مخصوص مہمان خانے میں قیام پذیر ہیں۔ رات کا وقت ہے۔نواب صاحب جب مہمان خانے میں داخل ہوتے ہیں تو کہتے ہیں”شب بخیر، وزیر خانم“۔ یہاں ”شب بخیر“کا فقرہ ان معنوں میں استعمال نہیں ہوا ہے جن معنوں میں آج یہ مروج ہے۔ چنانچہ حاشیے میں یہ وضاحت درج ہے

”پرانے زمانے میں شام یا رات کو ملاقات کے وقت ”شب بخیر“کہتے تھے، گویا یہ انگریزی Good Eveningکا مرادف تھا۔ آج یہ فقرہ اس وقت بولتے ہیں جب رات کے لیے رخصت ہو رہے ہوں، یعنی اب یہ فقرہ Good Nightکا مرادف ہو گیا ہے۔

یہاں اہم بات صرف یہ نہیں ہے کہ ”شب بخیر“کے فقرے کو مصنف نے قدیم معنی میں استعمال کیا ہے جس میں دلچسپ پہلو یہ بھی پنہاں ہے کہ اس فقرے کے موجودہ اور قدیم معنی ایک دوسرے کے متضاد ہیں، جیسا کہ حاشیے کی درج بالا عبارت سے ظاہر ہے، بلکہ زیادہ اہم بات یہ ہے کہ یہ فقرہ موقع اور محل سے بھی گہری مناسبت رکھتا ہے۔

ناول میں جگہ جگہ اردو اور فارسی اشعار کا استعمال ایک طرف جہاں بیانیہ کو نیا رنگ عطا کرتا ہے وہیں اس حقیقت کا اظہار بھی ہے کہ ہماری قدیم ادبی تہذیب میں شعر سننے سنانے کا عام رواج تھا۔اسے آداب محفل اور طرز گفتگو وغیرہ میں غیر معمولی اہمیت حاصل تھی۔ موقع و محل کے لحاظ سے دلچسپ اور اعلیٰ درجے کے شعر سنانا شخصیت کی خوبی اور بڑائی کی علامت سمجھا جاتا تھا۔ اور جواب میں بر محل شعر پڑھ دینامزید خوبی کی بات تھی۔ ناول میں یہ پہلو جس خوبصورتی اور چابکدستی کے ساتھ نمایاں ہوا ہے،اس کی دادنہ دینا بڑی نا انصافی ہوگی۔ مصنف نے کمال ہنر مندی کے ساتھ اشعار کو جا بجا عبارتوں اور مکالموں میں اس طرح کھپایا ہے کہ معلوم ہوتا ہے وہ اشعار انھیں موقعوں کے لیے کہے گئے تھے۔یہ احساس ہی نہیں ہوتا کہ بیان کے دوران ان اشعار کو الگ سے لاکر رکھا گیا ہے۔ یہاں بھی فاروقی صاحب کے مطالعے کی وسعت، اردو فارسی کی شعری روایت پر گہری نظر اور ان کا علمی استحضار پوری آب و تاب کے ساتھ جلوہ گر ہے۔ جہاں جہاں فارسی اشعار لائے گئے ہیں وہاں ان کا اردو ترجمہ درج نہیں کیا گیا ہے۔ ممکن ہے کچھ لوگ اسے ناول کی خامی پر محمول کریں۔لیکن اس کا سبب غالباً یہ ہے کہ یہاں فارسی اشعار بیانیہ کا جزوبنا کرلائے گئے ہیں، اس لیے ان کا ترجمہ بیانیہ کے بے ساختہ پن کو ضرور مجروح کر دیتا۔یہاں اشعار کے استعمال کی کچھ مثالیں پیش کر دینا شاید نا مناسب نہ ہوگا۔

محمد یحییٰ بڈگامی کی نیک سیرت بیوی اور داﺅد و یعقوب کی ماں بشیر النسا نے شوہر کے انتقال کے چند ہی مہینے بعد داعی اجل کو لبیک کہا۔ ان کی وفات کے ذکر کے فوراً بعد یہ بر محل شعر درج ہے

از موت و حیات چند پرسی آخر
خورشید بہ روز نے در افتاد و برفت

(ترجمہ: زندگی اور موت کے بارے میں کیا پوچھتے ہو۔بس یہ سمجھو کہ دھوپ روزن سے اندر آئی اور گزر گئی)

ایک موقع پر نواب شمس الدین احمد وزیر خانم کے یہاں تشریف فرما ہیں۔ نواب موصوف اور وزیر خانم کے درمیان لطف کی باتیں ہو رہی ہیں۔ ملحوظ رہے کہ مارسٹن بلیک کی موت کے بعد وزیر خانم ابھی نواب موصوف سے باقاعدہ منسلک نہیں ہوئی ہیں۔ البتہ دونوں طرف سے وفور شوق اور شدید چاہت کا کچھ نہ کچھ اظہار ہونے لگا ہے۔ اس وقت نواب شمس الدین اور وزیر خانم کے بیچ جو مکالمہ ہو رہا ہے اس کا کچھ حصہ ملاحظہ کریں۔ نواب صاحب وزیر خانم کے حسن کی تعریف کرتے ہوئے کہتے ہیں۔

”تم نے پورے مہتاب کی طرح اس گھر کو روشن کر رکھا ہے اندھا ہی ہو جو تمھاری خوبیاں نہ دیکھ پائے۔ ہمارا بس چلے تو تمھیں چادر مہتاب کی طرح اوڑھ کر سو جائیں۔“
”سرکار نے مجھے چاند کہا، میری توقیر کی۔ لیکن عالی جاہ تو شمس ریاست اور مہر امارت ہیں، سورج کے آگے چاند کی کچھ حیثیت نہیں۔ عالی جاہ نے ضرور سنا ہوگا، نور القمر مستفید من الشمس۔ سورج اپنی منزل میں چلا جائے گا اور چادر مہتاب لپٹی لپیٹی دھری رہ جائے گی۔“
”بھئی واللہ۔ آپ کے فقرے کیا ہیں، فقرہ بازیاں ہیں۔ کہیں ان فقروں میں آپ ہمیں اڑا ہی نہ دیں۔“نواب نے ہنس کر کہا۔
”سرکار ہم تو خود پرِ کاہ ہیں، حضور کی نسیم شفقت کے منتظر ہیں کہ ہمیں اڑا لے جائے اور آسودہ ¿ منزل کر دے۔“
”اور منزل کہاں ہے آپ کی، یہ تو بتایا نہیں آپ نے۔“
”پرکاہ کی منزل کیا، تروتازہ ہو تو گلدستہ، خشک اور خزاں رسیدہ ہو تو گلخن۔“
”لیکن آپ نہ پرکاہ ہیں نہ خزاں رسیدہ۔ ابھی تو آپ پر ٹھیک سے بہار آئی ہی نہیں۔“وزیر نے مسکرا کر سر جھکا لیا اور طالب آملی کا شعر پڑھا

ز غارت چمنت بر بہار منت ہاست
کہ گل بدست تو از شاخ تازہ تر ماند

(ترجمہ: تیرا چمن کو غارت کرنا بہار پر بے شمار احسانات کا سبب ٹھہرا ہے۔ کیونکہ پھول تیرے ہاتھ میں آ کر شاخ پر سے زیادہ تازہ ہو جاتا ہے۔)

اس شعر کے بر محل اور برجستہ استعمال سے قطع نظر مکالموں کی بے ساختگی اور ان میں رعایتوں اور مناسبتوں کی خوبصورت کارفرمائی صاف دیکھی جا سکتی ہے۔ یہاں یہ بھی عرض کردوں کہ درج بالا دونوں فارسی اشعار کا ترجمہ خود راقم الحروف نے کیا ہے۔

ناول میں کرداروں کی تعداد خاصی ہے۔ اور تقریباًتمام اہم کرداروں کا ربط براہِ راست یا بالواسطہ وزیر خانم سے ہے جن کی حیثیت ناول میں مرکزی کردار کی ہے۔ ناول کے اہم کرداروں میں مارسٹن بلیک، ولیم فریزر، نواب شمس الدین احمد خاں، محمد یحییٰ بڈگامی، میاں مخصوص اللہ، مرزا غالب، عمدہ خانم عرف منجھلی بیگم، محمد یوسف سادہ کار، نواب مرزا داغ،ولی عہد سوئم میرزافخرو بہادر وغیرہ ہیں۔ مصنف نے تمام کرداروں کو ان کے مقام و مرتبہ اور شخصی خصوصیات کے پورے التزام کے ساتھ پیش کیا ہے۔ وزیر خانم کو ناول میں چار اشخاص کے ساتھ یکے بعد دیگرے وابستہ دکھایا گیا ہے۔ ان میں مارسٹن بلیک اور نواب شمس الدین احمد خاں کے ساتھ وہ بغیر نکاح وابستہ رہیں اور آغا مرزا تراب علی اور میرزا فخرو بہادر ولی عہد سوئم سے ان کا مناکحت کا رشتہ رہا۔ ان چاروں افراد کے بیان اور ان کے کردار کی خصوصیات کی تفصیل میں مصنف نے کمال ہنر مندی کا اظہار کیا ہے۔ ان میں مارسٹن بلیک اور نواب شمس الدین احمد سے وزیر خانم کی وابستگی کے زمانے کو خاص اہمیت اس لیے بھی حاصل ہے کہ اول تو وزیر خانم نے ان کے ساتھ نسبتاً زیادہ طویل عرصہ گزارا، دوسرے یہ کہ ان رشتوں کی تہ میں فریقین کی طرف سے جذباتی شدت اور دل کے معاملے کو بھی خاصا دخل تھا۔

یہ ناول اوپری سطح پر محبت کی ایسی داستان ہے جس میں کامیابی اور نا کامی و محرومی ساتھ ساتھ چلتی ہیں۔ لیکن اس کی تہ میں ایسی حقیقتیں بھی پوشیدہ ہیں جو انیسویں صدی کے ہندوستان کی تاریخی، سیاسی اور تہذیبی صورت حال کی بھر پور عکاسی کرتی ہیں۔ اس زمانے میں ہندوستانیوں کے تئیں انگریزوں کا رویہ کیا تھا اور انگریز حکام اپنی طاقت کو روز بروز مزید مستحکم کرنے کے لیے کیا کیا حکمت عملی اختیار کر رہے تھے، اس کی طرف بھی بہت سے اشارے ناول میں موجود ہیں۔ولیم فریزر کا قتل ناول کے اہم ترین واقعات میں سے ایک ہے۔ اس کے نتیجے میں ہندوستان خاص کر دہلی کی معاشرتی اور سیاسی صورت حال پر کیا اثرات مرتب ہوئے، اس کا اندازہ بھی ناول سے ہوتا ہے۔

مختلف علوم و فنون کا بیان ان کی مکمل تفصیلات اور تمام باریکیوں کے ساتھ ناول کے صفحات پر دیکھا جا سکتا ہے۔ حیرت ہوتی ہے کہ مصنف کی معلومات اور مشاہدات کی وسعت کہاں تک ہے۔ عام اور معمولی چیزوں کے بارے میں بھی یہاں جس تفصیل سے کام لیا گیا ہے وہ بلا شبہ دیدنی ہے۔بنی ٹھنی کی تصویر کا بیان ہو،کشمیر کے مختلف مقامات کا ذکر ہو، گھریلو ساز و سامان، کھانا پینا، لباس و پوشاک، عادات و اطوار، ان تمام کے بارے میں حد درجہ باریک بینی سے کام لے کر انھیں ہمارے سامنے آئینہ کر دیا گیا ہے۔ بنی ٹھنی کی تصویر کے بیان میں مصنف نے غیر معمولی باریک بینی کا ثبوت پیش کیا ہے

”کاسنی رنگ کی کامدار ساری، پلو سے سر ڈھکا ہوا، لیکن ساری اس قدر باریک تھی کہ سر کا ایک ایک بال،مانگ میں چنی ہوئی افشاں کے ذرے، ماتھے کے جھومر میں جڑے ہوئے یاقوت، ہیرے، گومید اور تامڑے صاف جھلکتے تھے۔ کھلتا ہوا گندمی رنگ، منھ پر بہت ہلکی سی مسکراہٹ کی شفق، اور مصور اس قدر مشاق تھا کہ مسکراہٹ کی وجہ سے کانوں کی لوﺅں کی سرخی اور خفیف سا کھنچاﺅ تک دکھائی دیتا تھا، بلکہ محسوس ہوتا تھا۔ بڑی بڑی جامنی آنکھیں، پتلیوں کی سیاہی میں نیلگونی جھلکتی ہوئی، سیدھی ناک، بظاہر ذرا لمبی لیکن دوبارہ دیکھیں تو بالکل مناسب معلوم ہو، ناک میں بڑا سا بلاق جس میں ایک سرمئی موتی۔ گردن اونچی اور نازک، نخوت اور اعتماد کی بلندی اس میں نمایاں تھی۔گردن میں گول ترشے ہوئے جامنیا کے دانوں کا ہار،جس میں جگہ جگہ کسی زردی مائل گلابی پتھر کے بڑے بڑے دانے کشمیری ناشپاتیوں کی شکل میں تراشے گئے تھے۔

ملحوظ رہے کہ یہاں میں نے تصویر کی جزئیات کا مکمل بیان نقل نہیں کیا ہے۔ درج بالا اقتباس سے صاف اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ مصنف کی چشم تخیل نے کس قدر باریک بینی سے کام لیا ہے اور قوت بیان نے تفصیلات کو کس خوبی اور دلکشی کے ساتھ پیش کیا ہے۔

تاریخی اعتبار سے یہ ناول انیسویں صدی سے بھی بہت پہلے سے شروع ہو کر سال 1856میں ختم ہوتا ہے۔ اس پورے عرصے کا بیان ہمیں ایسی دنیا کی سیر کراتا ہے جو معاشرتی اور تہذیبی لحاظ سے بے حد معمور ہے۔ یہاں کی زندگی اور اس کی اقدار نہایت مستحکم اور توانا ہیں۔ ہر طرف زندگی کی چہل پہل اور تحرک نظر آتا ہے۔ یہ دنیا ایسی ہے جس پر کوئی بھی عہد فخر کر سکتا ہے۔ یہاں کی ادبی تہذیب بھی پوری تابناکی کے ساتھ جلوہ گر ہے اور دنیا کی دوسری بڑی تہذیبوں سے خود کو کم نہیں سمجھتی۔ لیکن پھر زمانے کی بساط الٹتی ہے اور سماں بدل جاتا ہے۔ناول کے پورے پس منظر میں اس کا عنوان ”کئی چاند تھے سر آسماں“ جو احمد مشتاق کے درج ذیل شعر سے ماخوذ ہے، اپنی معنی خیزی نمایاں کرتا ہے

کئی چاند تھے سر آسماں کہ چمک چمک کے پلٹ گئے
نہ لہو مرے ہی جگر میں تھا نہ تمھاری زلف سیاہ تھی

ناول کے خاتمے کے فوراً بعد قدیم انگریزی شاعر اور فکشن نگارOliver Goldsmith(1728-1774)کی مشہور نظم ”مسافر“ The Traveller (مطبوعہ 1764) کی تین سطریں (اردو ترجمہ) بطور اختتامیہ درج ہیں جو حسب ذیل ہیں:

میری جوانی کے دن در بدری میں گئے اور فکر الم میں
نہ تھمنے والے قدموں کے ساتھ کسی خیر گریز پا کے تعاقب پر مجبور
وہ جو اپنی جھلک دکھا دکھا کر میرا منھ چڑاتا رہتا ہے

ان سطور سے معنی و مفہوم کے جو پہلو نکلتے ہیں وہ درج بالا شعر اور عنوان ”کئی چاند تھے سر آسماں“سے گہری مطابقت رکھتے ہیں۔اور یہ سب مل کر ناول کے تناظر کو زمان و مکاں کے وسیع امکانات سے وابستہ کر دیتے ہیں۔اس طرح یہ ناول خارجی واقعات کا بیان محض نہ ہو کر ہمارے ادبی و تہذیبی حافظے کی علامت بھی بن جاتا ہے۔

بشکریہ سہ ماہی ’نئی کتاب‘(اپریل۔جون2007)نئی دہلی

شمس الرحمٰن فاروقی

Shamsur Rahman Faruqi

شمس الرحمٰن فاروقی

اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف

سوال : دار اور وار کے استعمال کی وصاحت کیجیے،مثلاً نمبردار،ٹھیکیدار، دلدار، سلسلہ وار،نمبر وار آئیے، دل وار دیا؟

جواب: علمہ کوئی لفظ نہیں ہے۔ اگر علم کے آگے چھوٹی ”ہ“ تا ے تانیث کی ہے تو بے معنی ہے کیونکہ علم کی تانیث کچھ نہیں۔ اور اگر علمہ کی چھوٹی ”ہ“ تا ے وحدت ہے تو بھی نام کی حیثیت سے بے معنی ہے، کیونکہ اس صورت میں ”علمہ“ کے معنی ہوں گے ”ایک علم“ جو کسی کا نام نہیں ہو سکتا۔ اور اگر علمہ کی چھوٹی   ہ”ہ“ بطور ضمیر ہے تو اس کا مطلب ہوگا ”اس کا علم“۔ نام کے طور پر یہ بھی بے معنی ہے۔

picture curtsy

http://shabkhoon.in

علما البتہ ایک لفظ ہے، مگر ادھورا۔ یہ دراصل قرآنی دعا رب زدنی علماً (سورہ طٰہ، آیت 114 ) کا آخری لفظ ہے۔ تجوید کے اعتبار سے اس کو علما ًبھی پڑھ سکتے ہیں۔ اس کے معنی ہیں، ”ایک علم، (لہٰذا) صرف علم۔“ ظاہر ہے کہ یہ بھی کوئی نام نہیں۔ رب زدنی علماً کا مطلب ہے، ”اے میرے رب، میرا علم بڑھا دے۔“ لہٰذا ظاہر ہے کہ علما، یا علماً کوئی نام نہیں ہو سکتا۔ بعض خوش عقیدہ لوگ قرآن کا کوئی لفظ لے کر اپنے بچوں کا نام قرار دے دیتے ہیں۔ قرآن کے ناموں کے مبارک ہونے میں کیا شبہ ہے، لیکن معنی کا بھی لحاظ اشد ضروری ہے۔
رہا سوال علمی کا، تو یہ بے شک بامعنی لفظ ہے۔ اردو میں یہ صرف صفت کے طور پر استعمال ہوتا ہے، جیسے، علمی کتاب، علمی مضامین، علمی نکتہ، اخبار علمی وغیرہ۔ لہٰذا تنہا لفظ علمی بھی کسی کا نام نہیں قرار پا سکتا۔ ہاں کوئی علمی خاتون، علمی خان، وغیرہ نام رکھ لے تو رکھ لے، لیکن ایسے نام سننے میں نہیں آئے۔ تخلص کے طور پر ضرور ممکن ہے۔ ”سیاست جدید“ کانپور کے ایڈیٹر مولانا اسحٰق کا تخلص علمی تھا۔
سوال: عربی میں ”شہر“ کے معنی ”مہینہ“ کے ہوتے ہیں، لیکن اردو میں یہ ٹاون، نگر، اور ضلع کے معنی میں استعمال ہوتا ہے۔ کیوں؟
جواب: عربی کا ”شہر“ اور اردو فارسی کا ”شہر“ الگ الگ لفظ ہیں۔ عربی لفظ کا مادّہ ش۔ہ۔ر۔ ہے جس کے معنی ہیں، ”نمودار ہونا، نمایاں ہونا۔“ چونکہ مہینے کا آغاز چاند کے نمودار ہونے پر منحصر تھا، لہٰذا شہر کے معنی ”مہینہ“ ہو گئے، یعنی جب چاند نمودار ہوا تو مہینہ شروع ہوا۔ فارسی کا لفظ ”ماہ“ بمعنی ”مہینہ“ بھی اسی منطق کی یادگار ہے۔اردو فارسی لفظ ”شہر“ بمعنی City وغیرہ، بہت قدیم فارسی لفظ ہے۔ قدیم فارسی میں یہ لفظ کچھ ”کشستر“ کی طرح کا تھا۔ سنسکرت میں بھی یہ ”کشتر“ ہے جہاں سے ہم نے شہر بنا لیا۔
سوال: ”کانجی ہاوس“ کا تلفظ کیا ہے، ”چالان“ کے اصل معنی کیا ہیں، اور ’ٹھویاٹھے“ کس زبان کا یا بولی کا لفظ ہے؟
جواب: یہ آپ نے ایک کی جگہ تین سوال پوچھ دیے اور ان میں کسی کا کوئی خاص تعلق اردو زبان کے صرف یا روزمرہ سے نہیں۔ بہرحال، ان کا جواب ملاحظہ ہوک”کانجی“ بروزن فاعلن یا بروزن کام جی، تامل اور تیلیگو زبانوں کا لفظ ہے لیکن ہمارے یہاں غالباً انگریزی سے آیا ہے۔ تاملتیلگو میں کانجی بہت پتلے پکائے ہوئے چاول کو کہتے ہیں، بلکہ اسے پکائے چاولوں کی پیچ یا پساون کہہ سکتے ہیں۔ ظاہر ہے کہ اس میں غذائیت براے نام ہوتی ہے۔ انگریزوں نے اسے Congee کہا لیکن تلفظ وہی کانجی رکھا۔ انگریزی انتظام میں جن سپاہیوںکو قید کی سزا دیتے تھے انھیں کھانے کے لیے صرف کانجی ملتی تھی۔ اس طرح، جس خیمے میں یہ قیدی رکھے جاتے تھے اسے Congee House کہنے لگے۔ یہی نام پھر ان باڑوں یا چھپر کے گھروں کے لیے مستعمل ہو گیا جن میں آوارہ پھرنے والے جانوروں کو، یا کسی کے جانور کو بجبر اس کے مالک سے لے کر قید میں رکھا جاتا تھا۔ یہی لفظ اب بھی رائج ہے۔

چ”چالان“ اردو کا لفظ ہے۔ یہ ”چلناچلانا“ سے بنایا گیا ہے۔ اس کے معنی وہ کاغذ ہیں جس پر کسی سامان یا سامانوں کی فہرست درج کرکے وہ سامان کسی کے پاس بھیجا جائے (یعنی سامان کو چلایا جائے)۔ اس سے پھر یہ معنی بنائے گئے کہ وہ کاغذ جس میں کسی چیز، مثلاً کسی رقم کی کیفیت درج ہو۔ لہٰذا سرکاری خزانے میں جمع ہونے والی رقم جس کاغذ پر درج کی جاتی تھی اسے بھی چالان کہا جاتا ہے۔ اول الذکر معنی سے یہ معنی نکلے کہ وہ کاغذ جس پر ملزموں کی فہرست درج کرکے عدالت میں جمع کی جائے (یعنی وہ عدالت میں لے جائے جائیں) اسے بھی چالان کہا جائے۔ یہ لفظ ہندوستانی انگریزی میں مستعمل ہے، معیاری انگریزی میں نہیں ہے۔

پرتاپگڈھی (یعنی اودھی کی ایک قسم) اور مغربی بھوجپوری (یعنی بلیا، غازی پور، الٰہ آباد وغیرہ کی زبان) میں ”ٹھوٹھے“ بمعنی ”عدد“ ہے۔ پوربی بھوجپوری، یعنی ضلع بھوجپور اور پٹنہ وغیرہ کی بولی میں یہی لفظ ”گو“ (مع وا ومجہول) ہے۔ پوربی بھوجپوری میں اکثر ”ایک گو= ایک عدد“ کو ”ایگو“ بھی لکھتے اور بولتے ہیں۔
اس لفظ کی اصل نہیں معلوم۔ بنگالی میں عدد کو ”ٹا“ کہتے ہیں۔ ”ٹا“ اور ”ٹھو“ کی مشابہت واضح ہے۔ ممکن ہے یہی ”ٹا“ اودھی کے ”ٹھوٹھے“ میں، اور پھر بھوجپوری کے ”گو“ میں بدل گیا ہو۔ سنسکرت یہ بہرحال نہیں ہے۔

(سوالات از محمد ابراہیم صدیقی، الہٰ آباد،یوپی)

واپس اوپر

سوال: اکثر شعرا اپنے شعروں میں ”پانی“ کی جمع ”پانیوں“ استعمال کرتے ہیں۔ کیا یہ جائز ہے؟
جواب: ”پانیوں“ بمعنی پانی کی کثیر مقدار، یا بہت طرح کا پانی، اردو میں مستعمل ہے، لیکن لغات میں درج نہیں۔ یہ شاید اس وجہ سے کہ ”پانیوں“ میں استعاراتی کیفیت ہے اور لغات میں استعاراتی معنی بہت کم درج کیے جاتے ہیں۔ انجیل کی کتاب ”پیدائش“ Genesis کے بالکل شروع کی آیتوں میں لفظ Waters بار بار آیا ہے، اس انجیل کے تمام پرانے تراجم میں Waters کا ترجمہ ”پانیوں“ ہی کیا گیا ہے۔ اگر عبارت کا مضمون اس کا تقاضا کرتا ہو تو مجھے لفظ پانیوں میں کوئی قباحت نہیں معلوم ہوتی۔
سوال: ”حرف“ کا صحیح تلفظ کیا ہے؟ بہت سے اہل علم حضرات اپنی تقاریر میں حُرف (اول مضموم) کہہ جاتے ہیں۔ صحیح تلفظ کیا ہے؟
جواب: ”حرف“ بمعنی حرف تہجی، مثلاً الف، یا بمعنی بات، جیسے ”وہ ایک حرف بھی نہ بولا“، اس لفظ کا ایک ہی تلفظ ہے، حَرف، بروزن بَرف، یعنی بڑی ح پر زبر ہے اور رے ساکن ہے۔ اس کی جمع (حروف) بروزن حضور میں البتہ بڑی ح پر پیش ہے۔ بعض لوگ عام بول چال میں ”حرف“ کی جگہ ”حروف“ ضرور بول جاتے ہیں لیکن اس کی کوئی سند نہیں۔عربی میں حرف مع اول مضموم بھی ایک لفظ ہے، لیکن وہ بالکل مختلف لفظ ہے اور وہ اردو میں مستعمل بھی نہیں۔

(سوالات از شجاع الدین شاہد، ملاڈ، ممبئی، مہاراشٹر)

    29-C, Hastings Road, Civil Lines, Allahabad (U.P.)

شمس الرحمٰن فاروقی اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف

شمس الرحمٰن فاروقی

 
اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف
 
 

اس کالم میں اردو روزمرہ اور اردو زبان کے بارے میں قارئین کے سوالات کے جوابات دیے جاتے ہیں۔ ایک وقت میں تین سے زیادہ سوالات نہ پوچھے جائیںاور سوالات کا تعلق الفاظ کے استعمال، روزمرہ میں ان کے صرف اور ان کے معنی کے بارے میں ہو۔

ادارہ

 

سوال : ہمارے زبان دانوں کا قول ہے کہ ”ساٹھ برس کے بعد زبان میں ایک واضح فرق پیدا ہو جاتا ہے“ (”آب حیات“، ص124، مطبوعہ اترپردیش اردو اکیڈمی، لکھنو ¿)۔ تو پھر ہم اردو زبان کو قدامت سے کیوں جوڑتے ہیں اور اس کے الفاظ کے سند کے لیے قدیم شعرا کا کلام کیوں پیش کرتے ہیں؟

 

Shamsur Rehman Faruqi

جواب: یہ قول ”ہمارے زبان دانوں“ کا نہیں، صرف محمد حسین آزاد کا ہے اور بے بنیاد ہے۔ زبانوں میں واضح فرق پیدا ہونے کے لیے دس سال بھی بہت ہو سکتے ہیں اور ممکن ہے کہ سو سال میں بھی کوئی ”واضح فرق“ نہ پیدا ہو۔ اردو ان زبانوں میں ہے جن میں تبدیلی کی رفتار بہت سست رہی ہے اور آج بھی یہ بہت تیز نہیں ہے۔ لیکن یہ کہنا غلط ہے کہ اردو میں الفاظ اور محاورات وغیرہ کے معنی یا استعمال کی سند کے لیے صرف شعرا کا کلام پیش کیا جاتا ہے۔ نثر سے بھی شواہد لائے جاتے ہیں یا لغت کا بھی حوالہ دیا جاتا ہے۔ شرط صرف یہ ہوتی ہے کہ جس مصنف یا لغت سے ہم سند لا رہے ہیں اسے عام طور پر معتبر مانا جاتا ہو۔ دوسری بات یہ کہ سند ہمیشہ کسی خاص معنی یا استعمال کو ثابت کرنے کے لیے لائی جاتی ہے۔ ایسا نہیں ہے کہ ہر معنی یا استعمال کو ثابت کرنے کے لیے کسی نہ کسی شاعر یا نثر نگار کی سند ضروری ہو۔ مثلاً ”کتاب“ کے معنی وہی ہیں جو انگریزی میں Book کے ہیں۔ لیکن اگر یہ ثابت کرنا ہو کہ ”کتاب“ کو ”قرآن، یا کتاب الٰہی“ کے بھی معنی میں برتا گیا ہے تو ہم میر کے اس شعر سے سند لائیں گے م

picture curtsy http://shabkhoon.in

(دیوان پنجم)

ایک طرف جبریل آتا ہے ایک طرف لاتا ہے کتاب
ایک طرف پنہاں ہے دلوں میں  ایک طرف پیدا ہے عشق

 

اس سند کا مطلب یہ نہیں ہے کہ آپ بھی ”کتاب“ کو ”قرآن یا کتاب الٰہی“ کے معنی میں ضرور استعمال کریں۔ اس سند کا مطلب صرف اتنا ہے کہ ”کتاب“ کے ایک معنی یہ بھی ہیں۔ کوئی یہ بھی کہہ سکتا ہے کہ یہ معنی اب رائج نہیں۔ کوئی یہ بھی کہہ سکتا ہے کہ چونکہ میر نے لکھا ہے اس لیے ہم بھی لکھ سکتے ہیں۔ کوئی یہ بھی کہہ سکتا ہے کہ اس سند کے اعتبار سے ”کتاب“ کو ”وید، یا گیتا“ کے معنی میں بھی استعمال کر سکتے ہیں۔ یہ سب باتیں صحیح ہوںگی۔ معتبر مصنف یا لغت کی سند لانے کا یہی فائدہ ہے۔

دوسری بات یہ کہ آپ نے ”سند“ کو مذکر لکھا ہے۔ یہ لفظ مونث ہے اور اسے مونث ثابت کرنے کے لیے کسی معتبر لغت یا مصنف ہی کی سند لانی ہوگی۔

ایک بات یہ بھی کہنے کی ہے کہ ”ہم اردو زبان کو قدامت سے کیوں جوڑتے ہیں“ اردو کا روزمرہ یا محاورہ نہیں۔ آپ غالباً یہ کہنا چاہتے ہیں کہ ”اردو زبان کے بارے میں باتیں قدامت پرستی پر مبنی کیوں ہیں؟“؟

 

سوال: کوہ کندن وکاہ برآوردن کا معنی کیا ہے؟

 

جواب: اس کا اردو مترادف ہے ”کھودا پہاڑ اور نکلی چوہیا۔“ فارسی کہاوت کے لفظی معنی ہیں: پہاڑ کھود ڈالنا اور پھر اس میں سے صرف گھاس برآمد کرنا۔

براہ کرم ملحوظ رکھیں کہ اردو میں ”معنی“ کو عام طور پر جمع بولتے ہیں چاہے واحد ہی مراد لیں۔

 

سوال: اردو میں ون کو بن، یمنا کو جمنا، اور ورشا کو برکھا کیوں بولا جاتا ہے، جب کہ شعور کو سہور، تتمہ کو ٹٹمہ اور مزدور کو مجور کیوں نہیں بولا اور لکھا جاتا ہے؟

 

جواب: زبانیں جب لفظ بناتی ہیں یا غیر جگہ سے کسی لفظ کو لاتی ہیں تو وہ اس معاملے میں خودمختار ہیں کہ اس کے ساتھ کیا سلوک کریں۔ عام قاعدہ یہ ہے کہ زبان وہی لفظ بناتی ہے جو اس کے یہاں بن سکتا ہو۔ اور زبان جب باہر سے کوئی لفظ لیتی ہے تو اسے اپنے مطابق بنا لیتی ہے۔ لیکن اس قاعدے کے مستثنیات بھی ہیں۔ لہٰذا کوئی مجموعی حکم نہیں لگ سکتا۔

مثلاً آپ پوچھتے ہیں کہ ”تتمہ“ کو ”ٹٹمہ“ اور ”شعور“ کو ”سہور“ کیوں نہیں کر لیا گیا؟ وجہ ظاہر ہے کہ اردو میں تاے فوقانی (ت) موجود ہے۔ اس لیے تاے فوقانی (ت) کی آواز بدلنے کی ضرورت نہیں پڑی۔ یعنی تاے فوقانی (ت) کوٹ بنانے کی ضرورت نہیں تھی۔ عربی میں چونکہ ٹ نہیں ہے، اس لیے اگر لفظ ”ٹٹمہ“ وہاں لیا جاتا تو بے شک ”تتمہ“ کی شکل میں آتا۔ اسی طرح، اردو میں شین بھی موجود ہے، اس لیے ”شعور“ کی شین کو بدلنے کی ضرورت نہیں پڑی۔ لیکن چونکہ اردو میں عین (حرف) تو ہے لیکن اردو والے اس کی آواز کو عربی کی طرح نہیں بولتے بلکہ عام طور پر الف کی طرح بولتے ہیں۔ اس لیے وہ ”شعور“ کو یوں بولتے ہیں گویا وہ شَ+اُو+ رہو۔ عین کی آواز کو ہاے ہوز میں بدلنے کا کوئی رواج اردو میں نہیں اس لیے اردو میں شَ+اُو+ر رائج ہوا، شَ+ہُو+ر نہیں۔ یہ بھی خیال رکھیے کہ اصل عربی لفظ شُ+عُو+رہے لیکن اردو والے عام طور پر شین پر زبر لگاتے ہیں۔ کیوں لگاتے ہیں؟ بس اس لیے کہ اب یہ لفظ ہمارا ہے، ہم اسے یوں ہی بولیں گے۔

”مزدور“ کو پہلے زمانے میں ”مزور“ (یعنی دال مہملہ کے بغیر) بھی بولتے اور لکھتے تھے۔ اسی طرح، ”مزدوری“ کو ”مزوری“ بھی لکھتے اور بولتے تھے۔ یہ الفاظ Platts کے لغت میں موجود ہیں۔ بعد والوں نے دال کو ساقط کرنا ترک کر دیا۔ اور ”مجور“ نہ بولنے کی وجہ بھی یہی ہے کہ جب زبان میں زے کی آواز موجود ہے تو اس کو بلا وجہ جیم سے بدلنے کی زحمت کیوں اٹھائی جائے۔ یہ بھی خیال رکھیے کہ فارسی میں یہ لفظ مع اول مضموم یعنی ”مُزدور“ بروزن ”پرنور“ ہے۔ لیکن اردو والوں نے فارسی تلفظ چھوڑ کر میم پر زبر لگا لیا۔ کیوں لگالیا؟ اس کا جواب بس یہ ہے کہ ہماری مرضی، یہ لفظ ہمارا ہو گیا ہے، ہم اسے یوں ہی بولیںگے۔

شعور اور مزدور مع اول مضموم سے مع اول مفتوح کیوں ہو گئے، اس کا کوئی جواب نہیں۔ اسی طرح، اس بات کی بھی کوئی وجہ نہیں کہ وا اور ی کی آوازیں موجود ہوتے ہوئے بھی اردو والوں نے ون، یمنا، ورشا کو بن، جمنا، برکھا کیوں کر لیا؟ خیر برکھا میں ”کھا“ کے لیے تو جواب ہے کہ سنسکرت ”ورشا“ میں خالص شین نہیں، بلکہ کچھ کھہ سے ملتی ہوئی آواز ہے۔ لیکن سنسکرت وَاور یَ کو باے فوقانی (ب) کیوں بنالیا، اس کا کچھ جواب نہیں۔ لیکن یہی نہیں، سنسکرت شَ کو بھی اردو نے اکثر سین سے بدل لیا ہے، حالانکہ شین کو شین پڑھنا اردو والے کی پہچان میں شامل ہے۔ لیکن اردو نے دیش کو دیس، ویش کو بھیس بنا دیا۔ پھر نہ جانے کس دھن میں فرانسیسی کارتوش Cartouche کو بھی کارتوس کر دیا۔ پہلے زمانے میں انگریزی لفظ پنشن (Pension) کو بھی ”پنسن“ لکھتے اور بولتے تھے۔ غالب نے جگہ جگہ ’پنسن“ لکھا ہے۔

یہ اردو ہی کی تخصیص نہیں، تمام زبانوں میں اس طرح کی عجیب اور دلچسپ باتیں ملتی ہیں۔ یہ بھی زبان کے مزوں میں سے ایک مزا ہے کہ child کی جمع childs نہیں بلکہ children ہے اور ox کی جمع oxs یا oxes نہیں بلکہ oxen ہے اور cow کی ایک جمع kine بھی تھی۔ night کا تلفظ نائٹ ہے تو indict کا بھی تلفظ انڈائٹ ہے۔ اول الذکر اینگلو سیکسن لفظ ہے اور موخرالذکر لاطینی سے آیا ہے۔ لاطینی والے لفظ میں C کا تلفظ کاف تھا، اور night کا تلفظ پہلے زمانے میں یوں تھا گویا night میں gh نہیں بلکہkہے، یعنی night کو nikt کی طرح بولتے تھے۔ زبان ایک خودمختار اور بڑی حد تک بے اصول نظام ہے۔ اسی لیے کہتے ہیں کہ زبان میں قیاس نہیں چلتا، رواج عام جو کہے وہی سند ہے اور رواج عام کسی قاعدے کا پابند نہیں ہوتا۔

(سوالات از سنجے کمار، الہٰ آباد، (یوپی
 

29-C, Hastings Road, Civil Lines, Allahabad (U.P.)

 

ا”اردو دنیا“ کے قارئین مں اس کا لم کی خوب پذےرائی ہو رہی ہے۔ حال ہی مں بعض سوالات ایسے ارسال کیے گئے ہےں جن کا تعلق محض عربی اور فارسی زبان کے الفاظ اور ان کے معانی سے ہے۔ اگرچہ ان سبھی سوالات کے جوابات محترم شمس الرحمن فاروقی صاحب کی جانب سے دیے جارہے ہےں لیکن آئندہ سوالات کرتے وقت ےہ خیال رہے کہ ارسال کردہ جملہ سوالات کا تعلق صرف اردو زبان اور اس کے روز مرہ سے ہو۔
سوالات ارسال کرنے والے حضرات اپنے نام کے ساتھ مکمل پتہ بھی ارسال کریں۔

اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف **** شمس الرحمٰن فاروقی

1
شمس الرحمٰن فاروقی
 
اچھی اردو : روزمرہ، محاورہ، صرف
 

سوال: مشاعرہ کا صحیح تلفظ کیا ہے؟

 
جواب: عربی میں ’’شعر‘‘ کو باب مفاعلہ میں لے جاتے ہیں اور ’’مُشاعَرہ‘‘ (اول مضمون، چہارم مفتوح) حاصل کرتے ہیں۔ لیکن وہاں اس کے معنی ہیں، ’’مقابلے کی غرض سے باہم شعر پڑھنا یا کہنا‘‘ یعنی اس میں کسی محفل کلام خوانی اور سامعین کی موجودگی کا کوئی تصور نہیں۔ اردو میں اول مضمون اور چہارم مکسور (مُشاعِرہ) بمعنی ’’شعر سنانے کی محفل، جس میں سامعین بھی ہوں اور کئی شعرا شعر سنائیں‘‘ عام طور پر مستعمل ہے اور اسی کو صحیح سمجھنا چاہیے۔ بعض لوگ میم اور عین پر زبربولتے تھے، یا میم پر زبر اور عین پر زیر بولتے تھے۔ اب یہ تلفظ رائج نہیں ہیں۔ ’’مشاعرہ‘‘ (اول مضمون، چہارم مکسور) بروزن ’’مقابلہ‘‘ ہی صحیح ہے۔
 
سوال: طیب میں چھوٹی ی پر زیر ہے یا زبر؟
 
جواب: عربی میں بکسر تحتانی مشدد بمعنی ’’پاک، خوشگوار، اچھا، خبیث کا الٹا‘‘ درست ہے۔ لیکن اردو میں تحتانی کے زبر کے ساتھ بروزن نیز (بمعنی سورج) مستعمل ہے اور اردو کے لیے یہی درست ہے۔ آنحضرتؐ کے دو صاحب زادگان کے نام طیب اور طاہر یا مطاہر، اور بقول بعض طاہر اور مطاہر بتائے گئے ہیں۔ بعض کا یہ بھی کہنا ہے کہ صاحبزادۂ نبی کے نام کے طور پر ’’طیب‘‘ مع فتحہ و تشدید تحتانی (یعنی طَیِّیب) ہی درست ہے۔ یہ قول مختلف فیہ ہے، بہر حال اردو میں ’’طیب‘‘ چھوٹی ی پر زبر کے ساتھ (بروزن نیز بمعنی سورج) ہی درست ہے۔ کچھ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اگر یاے تحتانی مکسور مشدد کے پہلے فتحہ ہو تو اردو والے یاے تحتانی کے کسرہ کو فتحہ میں بدل دیتے ہیں۔ چنانچہ ذیل کے تمام الفاظ میں تحتانی مکسور ہے لیکن اردو میں مفتوح بولی جاتی ہے:
جید؛ سید؛ میت؛ وغیرہ۔
 
سوال: آہستہ مع ہاے ہوز درست ہے یا آہستا مع الف؟
 
جواب: ’’آہستا‘‘ مع الف کوئی لفظ نہیں۔ بعض لوگ ’’آہستہ‘‘ اور س کی طرح کے بہت سے لفظوں کو، جن کے آخر ہاے ہوز ہے، جب الف پر ختم ہونے والے لفظ کے ساتھ قافیہ کرتے ہیں تو ’’آہستہ‘‘ کو ’’آہستا‘‘، ’’پردہ‘‘ کو ’’پردا‘‘ وغیرہ لکھتے ہیں۔ اس کی کوئی سند نہیں۔ صحیح لفظ ’’آہستہ‘‘ ہے اور اسے ہمیشہ اسی طرح لکھنا چاہیے۔ ’’آہستہ‘‘، ’’پردہ‘‘، ’’جلوہ‘‘ جیسے الفاظ کو ضرورت قافیہ کی خاطر الف سے لکھنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے اور نہ اس کا کوئی جواز ہے۔
 

(سوالات ازشیخ عبداللہ، اکولہ، مہاراشٹر)

 
 
سوال: ارمغاں اور فرید کے معنی کیا ہیں؟
 
جواب: اَرمُغان مع اول مفتوح و سوم مضمون (اردو میں ارمغاں بھی مستعمل ہے) فارسی لفظ ہے۔ فارسی میں عام طور پر اول اور سوم مفتوح (اَرمَغان) رائج ہے۔ اس کے معنی ہیں تحفہ، یا سوغات، یا ہدیہ، خاص کر وہ تحفہ یا سوغات یا ہدیہ جسے سفر سے واپس آنے والے اپنے اقربا کے لیے لاتے ہیں۔ اسی لیے فارسی میں ارمغان کو ’’رہ آورد‘‘ بھی کہتے ہیں۔ ارمغان کے ایک معنی زرنقد کے بھی ہیں، لیکن اردو میں یہ معنی رائج نہیں۔
فرید بروزن شریف عربی لفظ ہے۔ اردو میں اس کے معنی ہیں: یگانہ، یکتا، بے نظیر۔ جو لوگ حضرت بابا فرید الدین گنج شکر کی اولاد ہیں وہ انھیں کی نسبت سے اپنے کو ’’فریدی‘‘ لکھتے ہیں۔
 
سوال: قدیم کرناٹک میں کی وہ استعمال کیا جاتا ہے۔ کیا یہ صحیح ہے؟
 
جواب : یہ سوال سمجھ میں نہیں آیا۔ سوال کنندہ کو لکھا گیا کہ وضاحت فرمائیں، لیکن کوئی جواب نہیں آیا۔
 
سوال: ستر پرچار، ساٹھ پر تین، کیا یہ کہنا صحیح ہے؟ہم نے چورہتر اور ترسٹھ پڑھا تھا؟
 
جواب : ستر پرچار، ساٹھ پر تین، وغیرہ یہ اردو محاورہ نہیں۔ اردو میں ’’چوہتر‘‘ (نہ کہ ’’چورہتر‘‘) اور ’’تریسٹھ‘‘ یا ’’ترسٹھ‘‘ ہے۔ یہ اردو زبان کی بہت بڑی خوبی ہے کہ اس میں گنتیوں کے لیے الگ الگ لفظ مقرر ہیں۔ ورنہ انگریزی اور فرانسیسی جو بہت ترقی یافتہ زبانیں کہلاتی ہیں، ان کو بھی بیس سے زیادہ گنتی نہیں آتی۔
 

(سوالات از محمد سمیع اللہ خان باز، ہتلا، شموگا)

 
 
سوال : ان دنوں شرجیل، ضویا، شیزان، راحیل، طالش، زارا جیسے نام بہت عام ہو رہے ہیں۔ مگر یہ الفاظ لغت میں نہیں ملتے۔ کیا آپ اس پر روشنی ڈالیں گے؟
 
جواب: شرجیل، بروزن تفصیل (اول مفتوح، یاے معروف)، بالکل صحیح اور اچھا مردانہ نام ہے۔ حضرت شرجیل بن حسنہ مشہور صحابی تھے۔ بوجوہ ان کی نسبت ان کی والدہ حَسَنَہ سے قائم کی جاتی ہے، ان کے والد سے نہیں۔ اس لفظ کے صحیح معنی نہیں مل سکے۔ غالباً یہ بہت پرانا عرب نام ہے۔ شُرجَیل (اول مضمون، دوم مفتوح) بن سعد بھی ایک مشہور عرب بزرگ تھے۔ بعض لوگوں نے انھیں تابعی کہا ہے۔ مغازی کے اولین مآخذ میں ان کا بھی نام لیا جاتا ہے۔ ہمارے یہاں شرجیل بروزن تفصیل مروج ہے۔ ’’شرج‘‘ مع اول مفتوح اور دوم ساکن کے ایک معنی ہیں، ’’سنگستان سے نرم زمین کی طرف بہنے والا پانی۔‘‘ شرجیل غالباً اسی سے مشتق ہے اور شُرجَیل اس کی تصغیر معلوم ہوتا ہے۔
ضویا نہیں، بلکہ زویا۔ یہ روسی زنانہ نام ہے۔ زویا ایک لڑکی تھی جو 1943 میں جرمن افواج کے خلاف بہت بہادری سے لڑی اور جرمنوں نے اسے بڑے ظلم کے بعد موت کے گھاٹ اتار دیا۔ جنگ کے بعد کے زمانے میں یہ نام روس میں بہت مقبول تھا۔ اب کم سننے میں آتا ہے لیکن ہندوستان کے بعض روس پسند مسلمانوں نے بھی اپنی لڑکیوں کو یہ نام دیا ہے۔ یہ اصلاً یونانی ہے اور اس کے معنی ’’زندگی‘‘ وغیرہ کی قسم Óÿ ÀیŸ۔
ÔیÒÇä ˜æÆی äÇã äÀیŸ¡ ãÀãá Àÿ۔ Çی˜ ãÔÀæÑ ÝÑÇäÓیÓی ãÕæÑ ÓیÒÇä ضروری تھا۔ شیز مع یاے معروف بروزن ’’چیز‘‘ البتہ آبنوس کے پیڑیا اس کی لکڑی کو کہتے ہیں۔ بعض لوگوں نے آبنوسی کمان کو بھی ’’شیز‘‘ لکھا ہے۔ بقول بعض یہ ایک علاقے کا نام بھی ہے۔ ممکن ہے اس علاقے کی نسبت سے کسی نے ’’شیزان‘‘ یعنی ’’شیز کے رہنے والے‘‘ بنا لیا ہو۔ اردو میں بہرحال شیزیا شیزان بطور نام کہیں سننے میں نہیں آئے۔
راحیل (یاے معروف) عبرانی ہے۔ یہ حضرت یعقوب کی بیوی یعنی حضرت یوسف کی ماں تھیں۔ عبرانی میں اس لفظ کے معنی ’’میمنا‘‘ ہیں۔ میمنا نرم مزاجی، نیکی اور حلم کی علامت ہے۔ یہ زنانہ نام ہے لیکن ہمارے یہاں بعض لڑکوں کا بھی نام راحیل سننے میں آیا ہے۔
طالش کی تفصیل یہ ہے کہ قدیم فارسی میں ایک قبیلے کا نام ’’کادوس‘‘ تھا۔ہخامنشی (قدیم فارسی کی ایک نہایت مشکل شکل) میں لکھتے ’’کادوس‘‘ اور پڑھتے ’’تالش‘‘ تھے۔ بعد میں شاید عربی کے زیر اثر تاے فوقانی کو طاے حطی میں بدل لیا گیا۔ جدید فارسی میں ’’طالش‘‘ ایک پہاڑی سلسلے اور ایک دریا کا نام ہے۔ میں نے کسی کا نام ’’طالش‘‘ نہیں سنا، لیکن ممکن ہے کسی صاحب کو اپنے بیٹے کے لیے پسند آگیا ہو۔
زار ابھی روسی، بلکہ وادی قاف کے علاقوں میں زنانہ نام ہے، کہیں کہیں روس میں بھی سننے میں آتا ہے۔ کہا گیا ہے کہ اس کی اصل فارسی ’’زر‘‘ بمعنی ’’دولت‘‘ ہے۔ ہمارے یہاں بعض لوگوں نے اپنی لڑکیوں کو یہ نام دیا ہے۔
 

(سوالات از جمیل الرحمٰن، کلٹی، ضلع بردوان)

 

رابطہ
29-C, Hastings Road, Civil Lines, Allahabad (U.P.)

 

اچھی اردو:روز مرہ،محاورہ،صرف، اس کا لم کی اردو دنیا کے قارئین میں خوب پذیرائی ہو رہی ہے۔ حال ہی میں بعض سوالات ایسے ارسال کئے گئے ہیں جن کا تعلق محض عربی اور فارسی زبان کے الفاظ اور ان کے معانی سے ہے۔ اگرچہ ان سبھی سوالات کے جوابات محترم شمس الرحمن فاروقی صاحب کی جانب سے دیئے جارہے ہیں۔ لیکن آئندہ سوالات کرتے وقت یہ خیال رہے کہ ارسال کردہ جملہ سوالات کا تعلق صرف اردو زبان اور اس کے روز مرہ سے ہو۔ (ادارہ) À

Haryana Honours Janab Shamsur Rahman Faruqi

 
 

Haryana Honours  Janab Shamsur Rahman Faruqi


 

The Haryana Urdu Academy honours Prof. Shamsur Rahman Faruqi with Hali Award for his recent work – ‘Kai Chaand the Sar-e Aasman’. The Hon’ble Governor of Haryana Akhlaqur Rahman Kidwai presented the prestigious Hali Award; a cash prize of Re One lakh, a shawl and a citation to SRF on 28th March 2007 at a function held at Panchkula. The function was presided over by the Haryana Chief Minister, Bhupinder Singh Hooda. Haryana Education Minister, Phool Chand Mullana was among other prominent guests. A mushaira was also organized after the award ceremony.

faruqi interview